1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنوبی فلپائن میں سیکیورٹی فورسز اور عسکریت پسندوں کے درمیان جھڑپیں

فلپائن کے جنوبی جزیرے باسیلان میں حکومتی فورسز اور مسلمان عسکریت پسندتنظیم ابو سیاف کے درمیان ہونے والی مسلح جھڑپوں میں کم از کم 53 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

default

یہ کارروائی گزشتہ دو برسوں میں ابوسیاف کے خلاف ہونی والی سب سے بڑی کارروائی ہے

سیکیورٹی فورسز نےجمعرات کے روز اپنے بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ ان جھڑپوں کے دوران 30 جنگجوؤں کو ہلاک کر دیا گیا۔ سیکیورٹی فورسز کے ترجمان برگیڈیئر جنرل رُستیکو گُریرو نے صحافیوں سے بات چیت میں کہا کہ ملک کے جنوب میں ابو سیاف کے مضوبط گڑھ کے خلاف حکومتی فورسز نے کارروائی کی جس میں 23 فوجی ہلاک جب کہ 20 زخمی ہوئے۔

Gefechte zwischen Armee und Geiselnehmern

ابوسیاف تنظیم فلپائن حکومت کے لئے اب بھی سب سے بڑا خطرہ گردانی جاتی ہے

جنرل گُریرو کے مطابق بدھ کے روز آٹھ گھنٹے جاری رہنے والی یہ کارروائی گزشتہ دو برسوں میں ابوسیاف کے خلاف ہونی والی سب سے بڑی کارروائی ہے، جس میں اتنی بڑی تعداد میں فوجی اور عسکریت پسند مارے گئے۔

2007ء میں کئے جانے والے ایک فوجی آپریشن میں پندرہ فوجی اور تقریبا 40 جنگجو ہلاک ہوئے تھے۔ گریرو کے مطابق حکومتی فورسز کو اس کارروائی کے دوران عسکریت پسندوں کی جانب سے شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔

عمومی طور پر یہی کہا جا رہا ہے کہ حکومت کی جانب سے فی الحال ابوسیاف تنظیم کے خلاف کسی فوجی آپریشن کا اعلان یا ارادہ ظاہر نہیں کیا گیا۔ جنوب مشرقی ایشیا کے سیاسی امور سے متعلق تجزیہ کار Mars Buan نے خبر رساں ادارے روئٹرز سے بات چیت میں کہا:’’اس ایک کارروائی کے علاوہ ایسا کہنا قبل ازوقت ہو گا کہ سیکیورٹی فورسز نے ابو سیاف کے خلاف آپریشن شروع کر دیا ہے۔‘‘

تاہم بعض مبصرین سیکیورٹی فورسز کی اس کارروائی کو ابو سیاف کے خلاف حکومتی آپریشن قراردے رہے ہیں۔ مبصرین کا خیال ہے کہ بظاہر حکومت اسے عام سی جھڑپ کہہ رہی ہے تاہم یہ ملک کے جنوب میں مضبوط ہوتی ابوسیاف تنظیم کے خلاف منظم فوجی آپریشن ہے۔

تاہم Mars Buan کے مطابق ماضی میں بہت بھاری جانی نقصان اٹھانے والی ابوسیاف تنظیم فلپائن حکومت کے لئے اب بھی سب سے بڑا خطرہ گردانی جاتی ہے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عدنان اسحاق