1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جنوبی جرمن صوبے میں سات نومولود بچوں کی لاشیں برآمد

جرمن پولیس نے جمعے کو کہا ہے کہ اسے جنوبی جرمن صوبے باویریا کے ایک اپارٹمنٹ سے مبینہ طور پر سات نومولود بچوں کی لاشیں ملی ہیں۔

پولیس نے بتایا کے باویریا کے علاقے والن فلز کے ایک مقامی باشندے نے ایک نو مولود بچے کی لاش ملنے پر جمعرات کی سہ پہر اس بارے میں پولیس کو چوکنا کیا تھا۔ جب پولیس افسر جائے وقوعہ پر پہنچے تو انہیں بچوں کی دیگر لاشیں ملیں۔

پولیس کی طرف سے جمعے کو دیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ پولیس اور استغاثہ کا خیال ہے کہ اس اپارٹمنٹ میں متعدد شیر خوار بچوں کی لاشیں موجود ہیں۔ پولیس ماضی میں باویریا کے اس چھوٹے سے شہر والن فلز کے اس اپارٹمنٹ میں رہائش پذیر ایک 45 سالہ خاتون کی تلاش میں ہے۔ بظاہر یہ خاتون ان بچوں کی ماں تھی۔ ایک خاتون پولیس اہلکار نے یہ اطلاع دیتے ہوئےتاہم یہ نہیں بتایاکہ آیا اس خاتون کو بچوں کے قتل کا مشتبہ مجرم سمجھا جا رہا ہے یا نہیں۔

Deutschland Bayern Kinderleichen in Wallenfels entdeckt

اپارٹمنٹ سے بچوں کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں

دریں اثناء فورنسک تفتیش کار بچوں کی لاشوں کا معائنہ کر رہے ہیں۔ پولیس نے کہا ہے کہ اس عمل میں کچھ وقت لگ سکتا ہے کیونکہ چند بچوں کی لاشیں بہت بُری حالت میں ہیں۔ پولیس کے بیان میں کہا گیا ہے کہ،’’بچوں کی لاشوں کے معائنے کے نتائج آئندہ ہفتے کے آغاز سے پہلے ممکن نہیں ہے‘‘۔

تفتیش کاروں نے پہلے جمعرات کو دیر گئے مقامی پریس کو بیان دیتے ہوئے دو بچوں کی لاشوں کے ملنے کا انکشاف کیا تھا۔ جرمن اخبار ’ بلڈ‘ کی رپورٹ کے مطابق جس اپارٹمنٹ سے بچوں کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں وہاں ماضی میں ایک خاتون اپنے شوہر کے ساتھ 18 سال تک رہائش پذیر رہی اور یہ کہ اُن کے تین بچے تھے۔ لیکن اس خاتون کے دیگر تعلقات سے بھی مزید چار بچے تھے۔ اطلاعات کے مطابق یہ خاتون اپنے بار بار حاملہ ہونے کے عمل کو چھپانے کی کوشش کرتی رہی تھی۔ اخبار کی رپورٹ میں نام ظاہر کیے بغیر ایک ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ اس خاتون کا چار مرتبہ اسقاط حمل بھی ہوا تھا۔ اخبار بلڈ کے مطابق ستمبر کے ماہ میں یہ خاتون اپنے شوہر سے جھگڑ کر اپارٹمنٹ چھوڑ کر چلی گئی تھی۔ مزید یہ کہ جاتے وقت یہ خاتون شراب کے نشے میں تھی اور اُس نے نشے کی حالت میں اپنے شوہر کو بتایا تھا کہ اُس نے نومولوں بچوں کی لاشیں اسی گھر میں چھپا رکھی ہیں۔

Neunfacher Säuglingsmord

اکثر نومولود بچوں کی لاشیں گھنے جنگلات سے برآمد ہوتی ہیں

یہ خاتون اخبارات کے کیوسک (چھوٹی دکان) میں کام کرتی تھی اور گرمیوں کے موسم میں یہ ایک سوئمنگ پوُل میں حفاظتی گارڈ کے طور پر بھی کام کرتی تھی۔

معروف جرمن اخبار زوڈ ڈوئچے سائٹنگ کے مطابق اس خاتون کے ایک پڑوسی کا کہنا ہے کہ وہ ایک شائستہ اور خوش مزاج خاتون تھی۔

جرمنی میں حالیہ سالوں میں طفل کُشی کے متعدد واقعات سامنے آئے ہیں۔ گزشتہ مئی میں ایک خاتون کو اپنے دو بچوں کو قتل کر کے انہیں فریزر میں چھپا دینے کے الزام میں تین سال اور آٹھ مہینوں کی قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

DW.COM