1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنسی زیادتی: سابق اسرائیلی صدر موشے کتساف قید سے رہا

جنسی زیادتی کے جرم میں سزا پانے والے سابق اسرائیلی صدر موشے کتساف کو جیل سے رہا کر دیا گیا ہے۔ اکہتر سالہ کتساف کو قصور وار ثابت ہونے پر دسمبر 2010ء میں سات سال کی سزائے قید سنائی گئی تھی۔

اگرچہ تب اُنہیں سات سال کی سزائے قید کا حکم سنایا گیا تھا تاہم اُنہوں نے پانچ سال قید میں گزارے، جس کے بعد حال ہی میں ایک پیرول بورڈ نے اُنہیں رہا کرنے کا حکم دے دیا تھا۔

اس سے پہلے دو  مرتبہ اُن کی وقت سے پہلے رہا کیے جانے کی اپیلیں اس بناء پر رَد کی جا چکی تھیں کہ اُنہوں نے پیرول بورڈ کے مطالبات مانتے ہوئے اپنے جرم قبول کرنے اور اُن پر اظہارِ افسوس کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ اب پیرول بورڈ نے کہا ہے کہ بالآخر موشے کتساف نے اپنا کیا دھرا قبول کر لیا ہے اور اُس سے پہنچنے والی تکلیف پر افسوس کا بھی اظہار کیا ہے۔

اسرائیل میں صدر کا عہدہ بڑی حد تک رسمی اور علامتی نوعیت کا ہوتا ہے۔ موشے کتساف سن 2000ء  سے لے کر 2007ء تک اسرائیل کے صدر رہے۔

دسمبر 2010ء میں اُنہیں اس بات کے لیے قصور وار قرار دیا گیا تھا کہ اُنہوں نے نہ صرف 1990ء کے عشرے میں کابینہ کا رکن ہوتے ہوئے اپنی ایک معاون خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی کی تھی بلکہ سربراہِ مملکت ہوتے ہوئے دو مزید خواتین کو بھی جنسی طور پر ہراساں کیا تھا۔ کتساف ہمیشہ اپنے یہ جرائم قبول کرنے سے انکار کرتے رہے۔

بدھ اکیس دسمبر کو اُن کی جیل سے رہائی کے مناظر اسرائیل کے بڑے ٹیلی وژن چینلز سے براہِ راست دکھائے جاتے رہے۔ وہ اپنی اہلیہ جِیلا کے ساتھ مسکراتے ہوئے وہاں موجود فوٹوگرافرز کے ہجوم کے پاس سے ہو کر گزرے اور بغیر کچھ کہے وہاں منتظر گاڑی میں بیٹھ کر روانہ ہو گئے۔

Israel Mosche Katzav tritt seine Haftstrafe an (Getty Images/U. Sinai)

سابق اسرائیلی صدر موشے کتساف سات دسمبر 2011ء کو اسرائیلی شہر راملے کی ایک جیل میں اپنی سزا شروع کرنے سے پہلے اپنے بیٹے سے گلے ملتے ہوئے

چند روز قبل اتوار اٹھارہ دسمبر کو پیرول بورڈ نے اُن کی رہائی کے احکامات جاری کرتے ہوئے لکھا تھا کہ پہلی ناکام سماعت کے بعد سے کتساف نے ’ایک طویل راستہ طے کیا ہے، جیل میں نفسیاتی علاج کے لیے دی جانے والی سہولتوں سے استفادہ کیا ہے اور خواتین کے خلاف اپنے کیے دھرے اور اس سے اُن کو پہنچنے والی تکالیف پر افسوس کا اظہار کیا ہے‘۔

وہ پہلے اسرائیلی صدر تھے، جنہیں یوں قصور وار قرار دیتے ہوئے سزا سنائی گئی۔ اس چیز کو اسرائیلی میڈیا نے ایک ’زلزلے‘ کے مترادف قرار دیا تھا جبکہ خواتین کے گروپوں نے، جو پہلے ہی کام کی جگہوں پر جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے خلاف نرم رویوں کے شاکی تھے، اس سزا کا خیر مقدم کیا تھا۔

موشے کتساف کی قبل از وقت رہائی پر اسرائیل میں کوئی بڑا عوامی احتجاج دیکھنے میں نہیں آیا کیونکہ عام طور پر وہاں اپنی دو تہائی قید جیل میں گزارنے والے قیدیوں کو رہا کر دیا جاتا ہے۔