1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

جنسیات کے موضوع پر نئی بھارتی فلم، سماجی حلقوں میں ہلچل

جنسیات کے موضوع پر نمائش کے لئے ریلیز ہونے والی ایک نئی فلم 'لوسیکس ایندڈ دھوکا' نے قدامت پسند بھارت کے سماجی حلقوں میں ہلچل مچا دی ہے۔

default

گزشتہ ہفتے ریلیزہونے والی اس فلم میں نہ صرف یہ کہ ایک برہنہ عورت کے دھندلے مناظر دکھائے گئے ہیں بلکہ ایسے جنسی مناظر بھی دکھائے گئے ہیں، جن کو خفیہ کیمروں کی آنکھ نے پکڑا ہے۔ فلم میں خفیہ، سیکیورٹی اوروڈیو کیمروں کے استعمال کو بھی دکھایا گیا اوریہ کہ کس طرح یہ جدید ایجادات انسان کی نجی زندگی کے پوشیدہ واقعات کی عکس بندی کرکے اُن کی آزادیوں پر قدغن لگا رہی ہیں۔

Bollywood-Star Shah Rukh Khan auf Plakat zu neuem Film

بالی وڈ کی کئی فلموں کے خلاف ہندو انتہا پسند تنظیموں نے مظاہرے کئے ہیں

بولی وڈ کی یہ غیرروایتی فلم جدید بھارت میں نہ صرف جنسیات کے بدلتے ہوئے تصورات کی عکاس ہے بلکہ اس میں یہ بھی دکھایا گیا ہے کہ کس طرح جنسیات ایک بازار جنس کا روپ دھار چکی ہے۔ فلم کے ڈائریکڑ Dibakar Banerjee کے مطابق جدید معاشی نظام میں اشیاء کی فروخت کے لئے جنسیات کو ایک آلے کے طور پر استعمال کیا جارہا ہے۔ اگر کسی شے کے اشتہار میں کسی حسینہ کے ہونٹ دکھائے جائیں تو اِس کے بکنے کے زیادہ امکانات ہوتے ہیں۔

بینرجی نے فلم کی کہانی کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ اس میں ایک کی جگہ تین کہانیاں ہیں۔ پہلی کہانی ایک فلم ساز کے بارے میں ہے، جو فلم کی ہیرؤئن کی زلفوں کا اسیر ہو کر اس کے عشق میں مبتلا ہوجاتا ہے۔ دوسری کہانی ایک سیکس اسکینڈل کے بارے میں ہے جب کہ تیسری کہانی کا مرکزی کردار ایک صحافی ہے جو ایک روک اسٹار کے بارے میں رپورٹ بنانا چاہتا ہے۔

بینرجی اس رائے سے متفق نہیں کہ ان کی یہ فلم جنسیات کے بارے میں ہے۔ ان کا کہنا ہے یہ فلم جنسیات کے طرف لوگوں کے بدلتے ہوئے رویوں سے متعلق ہے۔ انہوں کہا کہ اس فلم میں یہ بھی دکھایا گیا ہے کہ کس طرح لوگ جنسیات کو اپنے پیشے میں ترقی کرنے یا آگے بڑھنے کے لئے استعمال کرتے ہیں۔

کئی فلمی نقادوں نے اسے ایک نئی اور انوکھی تخلیق قرار دیا ہے، جو نہ صرف یہ کہ جنسیات کے مسئلے سے متعلق ہے بلکہ یہ بلواسطہ طور پر سماج کے کئی اور پہلوؤں کو بھی اجاگرکرتی ہے۔

رپورٹ: عبدالستار

ادارت: کشور مصطفیٰ