1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جسم فروشی کو ’قانونی‘ بنا دیں : بھارتی سپریم کورٹ

بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت سے پوچھا ہے کہ جسم فروشی کے کاروبارکو قانونی حیثیت کیوں نہیں دی جا سکتی۔ عدالت کے مطابق اس کاروبار کو روکنا ایک ناممکن عمل ہے۔

default

بھارت کی متعدد ریاستوں میں یہ ایک بڑا کاروبار بن چکا ہے

جمعرات کے روز ایک مقدمے کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ کے جج صاحبان دالویر بھنڈاری اور اے کے پٹنائیک نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ اگر یہ تسلیم کیا جاتا ہے کہ جسم فروشی دنیا کے قدیم ترین پیشوں میں سے ایک ہے اور اسے روکنا ناممکن ہے تو اسے قانونی حیثیت دے دینے میں کیا عار ہو سکتی ہے۔ کورٹ نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ جسم فروشی کو قانونی تحفظ دے کے عورتوں کی سمگلنگ اور سیکس ورکرز کو ایک مرتبہ پھر معاشرتی دھارے میں شمولیت ممکن بنایا جا سکتا ہے۔

Indien Prostitution Arztbesuch

عدالتی ریمارکس کے مطابق اس کاروبار کو قانونی بنانے سے سیکس ورکرز کو معاشرتی دھارے میں شامل ہونے کا موقع ملے گا

بچوں کی سمکلنگ سے متعلق ایک مقدمے کی سماعت کے دوران بھارت کی اعلیٰ ترین عدلیہ کے ججوں نے حکومتی وکیل گوپال شپرمانیم سے پوچھا کہ اس کاروبار کو قانونی حیثیت نہ دینے کی وجہ کیا ہے۔

’’اس طرح آپ اس کاروبار پر نظر رکھ سکتے ہیں۔ ان افراد کو معاشرتی دھارے میں شامل کر سکتے ہیں۔ انہیں طبی سہولیات فراہم کر سکتے ہیں۔ سیکس ورکرز چھپ کر کاروبار کریں یا سامنے، دنیا بھر میں کون سی جگہ اس کاروبار سزا دینے کر روکا جا سکا ہے۔‘‘

گھوپال سپرمانیم کے مطابق حکومت سپریم کورٹ کی اس تجویز پر غور کرے گی۔

حالانکہ جسم فروشی کے کاروبار پر بھارت بھر میں پابندی ہے تاہم کئی ریاستوں میں غیرقانونی طور پر یہ ایک بڑا کاروبار بن چکا ہے۔ ایک حکومتی کمیشن کی رپورٹ کے مطابق بھارت میں تقریبا تیس لاکھ خواتین بطور سیکس ورکرز کام کر رہی ہیں۔ اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ان میں سے زیادہ تر کم عمر لڑکیاں ہیں۔ جبکہ ان میں سے تیس فیصد کے بارے میں کہا گیا ہے کہ یہ وہ بچیاں ہیں، جو اس کاروبار سے مجبورا وابستہ ہوئیں ہیں اور ان کی عمریں بارہ سے پندرہ برسوں کے درمیان کی ہیں۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : کشور مصطفیٰ