1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمن چانسلر میرکل دو روزہ دورے پر ترکی میں

جرمن چانسلر میرکل آج اپنے ایک دوروزہ دورے پر ترکی پہنچ گئیں۔ اس دورے کے دوران ان کی ترک صدر عبداللہ گل اور وزیر اعظم ایردوآن کے ساتھ ملاقاتوں میں ترکی کی یورپی یونین میں ممکنہ شمولیت کے موضوع کو مرکزی اہمیت حاصل رہے گی۔

default

انگیلا میرکل اور وزیر اعظم ایردوآن کی ملاقات کے موقع پر لی گئی تصویر

جرمن سربراہ حکومت اپنے دو روزہ دورے پر آج پیر کو جب انقرہ پہنچیں تو ان کا پورے فوجی اعزاز کے ساتھ سرکاری استقبال کیا گیا۔ پھر انگیلا میرکل جدید ترکی کےبانی کمال اتا ترک کے مزار پر گئیں جہاں انہوں نے پھولوں کی چادر چڑھائی۔

بعدازاں انہیں اپنے ترک ہم منصب رجب طیب ایردوآن کے ساتھ ایک ملاقات میں تفصیلی مذاکرات کرنا تھے۔ انقرہ میں آج ترک وزیر اعظم کے ساتھ اپنی بات چیت کے بعد جرمن چانسلر نے کہا: ’’ظاہر ہے کہ ہم نے رکنیت سے متعلق مذاکرات کے بارے میں بھی بات چیت کی۔ ہم نے کہا کہ جو معاہدے موجود ہیں۔ ان کا احترام کیا جائے گا اور موجودہ مذاکرات جاری رکھے جائیں گے۔‘‘

Türkei Deutschland Angela Merkel in Ankara

چانسلر میرکل انقرہ میں کمال اتا ترک کے مزار پر

برلن اور انقرہ سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق جرمن چانسلر کے اس دورے کے پس منظر میں سب سے اہم بات وہ دوطرفہ اختلافات ہیں جو ترکی کے لئے یورپی یونین کی ممکنہ رکنیت سے متعلق دونوں ملکوں کی حکومتوں کے مابین پائے جاتے ہیں۔

انگیلا میرکل، جنہو‌ں نے اپنا گزشتہ دورہ ترکی اکتوبر 2006 میں کیا تھا، آج ہی انقرہ میں وزیر اعظم ایردوآن کے علاوہ ترک صدر عبداللہ گُل سے بھی مل رہی ہیں، جس کے بعد وہ استنبول روانہ ہوجائیں گی۔

ترکی، جس کے جرمنی کے ساتھ گہرے اقتصادی رابطے ہیں، گزشتہ کافی عرصے سے یورپی یونین کے ساتھ اپنی رکنیت کے بارے میں مذاکرات میں مصروف ہے۔ تاہم برسلز ابھی تک ترکی کو یورپی یونین کی مکمل رکنیت دینے پر تیار نہیں ہے۔ کئی بڑے رکن ملک اس کی مخالفت کر رہے ہیں اور بار بار ترک حکومت سے بھی یہ کہا جاتا ہے کہ طویل عرصے تک جاری رہنے والے ان مذاکرات کے بعد بھی یہ بات یقینی نہیں ہو گی کہ ترکی کو یورپی یونین میں شامل کر لیا جائےگا۔

Türkei Deutschland Angela Merkel in Ankara

انگیلا میرکل نے اتاترک کے مزار پر پھول بھی چڑھائے

خود جرمن چانسلر میرکل بھی یہ کہتی ہیں کہ وہ ترکی کے لئے یونین کی مکمل رکنیت کی بجائے ترجیحی شراکت داری کی حامی ہیں۔ یہی وہ نقطہ ہے جس پر وزیر اعظم ایردوآن کی حکومت جرمنی کو قائل کرنا چاہتی ہے کہ ترکی یونین میں اپنے لئے کسی ترجیحی پارٹنرشپ کا نہیں بلکہ پوری رکنیت کا خواہش مند ہے۔

اس دورے کے دوران جرمنی سے چانسلر میرکل کے ہمراہ ایک اعلیٰ سطحی اقتصادی وفد بھی ترکی گیا ہے۔ اس لئے کہ جرمنی اور ترکی دونوں ہی آپس کے تجارتی تعلقات کو مزید فروغ دینا چاہتے ہیں۔

ترکی یورپی یونین سے باہر جرمنی کا سب سے بڑا تجارتی ساتھی ملک ہے اور جرمنی میں آباد ترک نسل کے باشندوں کی تعداد بھی تین ملین کے قریب ہے، جو ترکی سے باہر ترک باشندوں کی کسی ایک ملک میں سب سے بڑی آبادی ہے۔ جرمنی میں ترک نسل کے تقریبا پانچ لاکھ افراد ایسے بھی جو اب تک جرمن شہریت اختیار کر چکے ہیں۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: مقبول ملک

DW.COM