1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمن چانسلر انگیلا میرکل براعظم افریقہ کے دورے پر

جرمن چانسلر انگیلا میرکل اتوار 9 اکتوبر کو براعظم افریقہ کے تین ملکوں مالی، نائیجر اور ایتھوپیا کے دورے کے لیے روانہ ہو گئیں۔ اپنے اس دورے کے دوران وہ نجی سرمایہ کاری کے لیے بہتر حالات پر بھی بات کریں گی۔

Angela Merkel Bundespressekonferenz (picture-alliance/dpa/K.Nietfeld)

جرمن چانسلر انگیلا میرکل پانچ سال کے وقفے کے بعد ایک بار پھر افریقی سرزمین پر قدم رکھ رہی ہیں

اس سے پہلے چانسلر میرکل نے آخری مرتبہ براعظم افریقہ کا دورہ پانچ سال قبل 2011ء میں کیا تھا۔ اپنے موجودہ دورے کے دوران میرکل مہاجرت کے اقتصادی اسباب پر بھی قابو پانے کی کوشش کریں گی۔

اُن کے اِس دورے کی پہلی منزل مالی ہے، جہاں دارالحکومت بماکو میں وہ نہ صرف وہاں کے سربراہِ مملکت ابراہیم بوبکر کیتا کے ساتھ ملاقات کریں گی بلکہ اُن جرمن فوجیوں کے ساتھ بھی ملیں گی، جو اس مغربی  افریقی ملک میں اقوام متحدہ کے ایک امن مشن میں حصہ لے رہے ہیں۔

میرکل مالی کا دورہ کرنے والی پہلی جرمن سربراہِ حکومت ہیں۔ مالی کا شمالی حصہ سن 2012ء میں مسلمان انتہا پسند باغیوں کے قبضے میں چلا گیا تھا۔ شمالی مالی کو مستحکم بنانے میں مدد دینے کے لیے اقوام متحدہ نے جو امن دستہ وہاں متعین کر رکھا ہے، اُس میں 550 جرمن فوجی بھی شامل ہیں۔

مالی کسی زمانے میں فرانس کی نو آبادی رہا تھا۔ سن 2013ء کے اوائل میں فرانس کی مداخلت کے نتیجے میں باغیوں کو پیچھے دھکیل دیا گیا تھا تاہم اُس علاقے میں مسلح گروہ آج بھی سرگرم عمل ہیں۔

میرکل کے ایجنڈے کا ایک اہم نکتہ یورپ کی جانب مہاجرت کی رفتار کو کم کرنا ہے۔ اس مقصد کے لیے میرکل اپنی ملاقاتوں کے دوران افریقی ملکوں میں سرمایہ کاری کے حالات اور اقتصادی استحکام کی ضرورت پر بھی بات کریں گی۔ اپنی روانگی سے ایک روز قبل قوم کے نام اپنے ہفتہ وار ویڈیو پیغام میں میرکل نے کہا:’’میرے خیال میں ہمیں افریقہ کے معاملات میں اب تک کے مقابلے میں کہیں زیادہ دلچسپی لینی چاہیے۔ افریقہ کی خوشحالی جرمن مفاد میں ہے۔‘‘

Flash-Galerie Wochenrückblick KW 28/2011Angola dos Santos Merkel (dapd)

جرمن چانسلر 2011ء میں اپنے دورہٴ افریقہ کے دوران انگولا کے صدر ایڈوآرڈو ڈوس سانتوس کے ہمراہ گارڈ آف آنر کا معائنہ کر رہی ہیں

مالی کے بعد پیر کے روز جرمن چانسلر نائجر جائیں گی۔ نائجر اور مالی کو ایسے ممالک کے طور پر دیکھا جاتا ہے، جن سے گزر کر تارکین وطن یورپ  کا رُخ کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جرمنی، فرانس اور اٹلی ان دونوں ملکوں کے ساتھ زیادہ قریبی اشتراکِ عمل کے لیے کوشاں ہیں۔

منگل کو جرمن چانسلر ایتھوپیا کے دارالحکومت ادیس ابابا جائیں گی، جہاں افریقی یونین کا ہیڈ کوارٹر بھی ہے۔ وہاں میرکل افریقی یونین کے امن و سلامتی کے مرکز کی اُس عمارت کا افتتاح کریں گی، جس کے لیے مالی وسائل جرمنی نے فراہم کیے ہیں۔

سن 2015ء میں آٹھ لاکھ نوّے ہزار مہاجرین پناہ کی تلاش میں جرمنی پہنچے۔ ان میں سے زیادہ تر کا تعلق شام اور افغانستان سے تھا جبکہ بہت سے وہ افراد بھی تھے جو افریقی ممالک میں غربت سے تنگ آ کر ہجرت پر مجبور ہوئے تھے۔