1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمن فوج میں غیر ملکیوں کی بھرتی بھی ممکن

جرمن فوج کے بنیادی ڈھانچے میں اصلاحات کے حوالے سے جو تجاویز زیر بحث ہیں، اُن میں سے ایک یہ بھی ہے کہ جرمنی میں آباد غیر ملکی تارکین وطن گھرانوں کے افراد کو بھی جرمن فوج میں بھرتی ہونے کی اجازت دی جائے۔

default

جرمن فوجیوں کی معمول کی مشق

جرمن فوج اپنی سرگرمیاں بطور آجر تیز تر اور پُر کشش بنانا چاہتی ہے۔ جرمن وزارت دفاع کی اطلاعات کے مطابق فوج بحیثیت ایک ادارے کے خود کو جرمن اور غیر ملکی دونوں طرح کے خاندانوں کے لئے زیادہ سے زیادہ پُر کشش بنانا چاہتی ہے۔

جرمن فوج کے بنیادی ڈھانچے میں اصلاحات کے حوالے سے جو تجاویز زیر بحث ہیں، اُن میں سے ایک یہ بھی ہے کہ جرمنی میں آباد غیر ملکی تارکین وطن گھرانوں کے افراد کو بھی جرمن فوج میں بھرتی ہونے کی اجازت دی جائے۔

حال ہی میں وفاقی کابینہ نے جرمنی میں لازمی ملٹری سروس ختم کرنے سے متعلق بل کی منظوری دی۔ اس قانون کے اطلاق کے ساتھ ساتھ جرمن فوج روزگار فراہم کرنے والے ایک اہم ملکی ادارے کی حیثیت سے اپنا امیج بہتر سے بہتر بنانا چاہتی ہے۔

Flash-Galerie Bundeswehr-Einsatz in Afghanistan

افغانستان متعین جرمن فوجی

اس کے لئے جرمن وزارت دفاع مستقبل میں جرمنی میں آباد غیر ملکیوں کو بھی جرمن فوج میں خدمات انجام دینے کا موقع فراہم کرنا چاہتی ہے۔ اس امر کا انکشاف جرمن جریدے ’ فوکس‘ میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ سے ہوا۔

اطلاعات کے مطابق جرمن فوج کی سرگرمیوں میں اضافے سے متعلق اہم اقدامات کی تفصیلات پر مشتمل ایک 73 صفحات پر مشتمل مسودہ تیار کیا گیا ہے۔ اس دستاویز میں پہلے سے شامل فوجی سرگرمیوں کا دائرہ کار وسیع تر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ جرمنی میں آباد ایسے افراد جو قابلیت، اہلیت اور فوجی خدمات سر انجام دینے کی صلاحیتیں رکھتے ہیں، انہیں جرمن فوج میں بھرتی ہونے کی اجازت ہوگی، یہاں تک کہ اگر ان کے پاس جرمن شہریت نہیں بھی ہے تب بھی یہ فوجی خدمات انجام دینے پر مامور کیے جا سکتے ہیں۔

جرمنی کی وزارت دفاع کے ایک ترجمان نے کہا ہے کہ جرمن فوج کے یہ فیصلے ملک میں شماریات آبادی سے متعلق اُن اندازوں کے تناظر میں نہایت اہم ہیں، جن کے تحت جرمن معاشرہ تیزی سے عمر رسیدہ ہو رہا ہے اور آئندہ 50 سالوں کے اندر جرمنی میں نوجوانوں کی تعداد بہت کم ہوگی۔

Karl-Theodor zu Guttenberg Bundeswehr NO FLASH

جرمن وزیر دفاع سوگُٹنبرگ نے حال ہی میں فوج میں اصلاحات کی تجاویز متعارف کروائیں

دوسری جانب جرمنی میں لازمی ملٹری سروس ختم کرنے کا فیصلہ بھی اس امر کا تقاضا کرتا ہے کہ جرمن فوج کی سرگرمیوں کو زیادہ سے زیادہ دلچسپ بنایا جائے تاکہ زیادہ افراد اس میں بھرتی ہونے کی طرف راغب ہوں۔

دوسری جانب جرمن فوج میں غیر ملکیوں کو بھرتی کرنے کا ایک اور اہم مقصد یہ بھی ہے کہ جرمنی میں کام کرنے والے والدین کے بچوں کے لئے ’ ڈے کیئر سینٹرز‘ اور کنڈر گارٹنز‘ کی تعداد میں بھی واضح اضافہ کیا جائے تاکہ کام کرنے والے والدین کو اپنے پیشے اور فیملی اور بچوں کی دیکھ بھال دونوں میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ اس سلسلے میں وفاقی جرمن پارلیمان میں جرمن فوج کے امور کے نگراں، فری ڈیمو کریٹک پارٹی (ایف ڈی پی) کے سیاستدان ہیلموٹ کیو نگز ہاؤس پہلے ہی کام کرنے والے والدین کے بچوں کی دیکھ بھال کے مواقع بہتر اور مؤثر تر بنانے پر زور دے چُکے ہیں۔

تاہم اب تک یہ واضح نہیں ہوا ہے کہ ان تجاویز کو عملی جامہ پہنانے کے لئے درکار رقم وفاقی حکومت کی طرف سے مختص کر دی گئی ہے یا نہیں۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس