1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جرمن فوج منشیات کے انسداد کے لئے زیادہ اقدامات نہیں کر رہی: افغان وزیر

افغانستان میں منشیات کے انسداد سے متعلق وزیر جنرل خدائے داد نے کہا ہے کہ افغانستان میں متعینہ جرمن فوج منشیات کے انسداد کے لئے زیادہ اقدامات نہیں کر رہی۔

default

اب تک جرمن فوج منشیات کے انسداد کی کوششوں سے مکمل لا تعلقی اختیار کئے ہوئے ہے

جرمن نشریاتی ادارے ARD کے جنوبی ایشیائی اسٹوڈیو کے ساتھ ایک انٹرویو میں اُنہوں نے اِس مقصد کے لئے مزید رقوم کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ جرمن فوجیوں کو منشیات کی فیکٹریوں اور منشیات ایک سے دوسری جگہ لے جانے والے ہرکاروں کے خلاف بھی کارروائی کرنی چاہیے۔

جیسا کہ کسی بھی سیاستدان سے توقع کی جا سکتی ہے، افغان وزیر ماحول جنرل خدائے داد نے سب سے پہلے تو افغانستان متعینہ جرمن فوج کی تعریف کی کہ وہ وہاں بہت شاندار خدمات سرانجام دے رہی ہے۔ ساتھ ہی لیکن اُنہوں نے ایک درخواست بھی کر ڈالی، جس کے مخاطب خاص طور پر جرمن ہی تھے۔ اُنہوں نے کہا: ’’جہاں تک منشیات کے انسداد کی کوششوں کا تعلق ہے، جرمن فوجیوں کی امداد اور اُن کا کردار بہت محدود ہے۔ ہمیں اور زیادہ امداد کی ضرورت ہے۔ ہم خاص طور پر یورپی ممالک کی جانب سے زیادہ مدد کی توقع کر رہے ہیں۔‘‘

افغان وزیر نے کہا کہ منشیات کا انسداد محض افغانوں کا مسئلہ نہیں، جس کی بہت سی وجوہات میں سے یہ بھی ہیں کہ نہ صرف افغانستان میں پیدا ہونے والی افیون سیدھی یورپ کی سڑکوں پر پہنچتی ہے بلکہ یہ افغانستان میں سرگرمِ عمل تمام فوجی دستوں کے لئے بھی خطرے کا باعث ہے۔ انہوں نے کہا: ’’افیون دہشت گردی کے لئے ایندھن کا کام دیتی ہے۔ اِس ناجائز رقم سے دہشت گرد ہتھیار اور گولہ بارود خریدتے ہیں، جو وہ افغانستان میں بے گناہ فوجیوں، بے گناہ انسانوں اور بزرگوں کو ہلاک کرنے کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ وہ اسکول جلاتے ہیں اور اسکول جانے والی طالبات کو زہر دے کر ہلاک کرتے ہیں۔ افیون کا فائدہ سیدھے سیدھے افغانستان میں دہشت گردی کو ہوتا ہے۔‘‘

Afghanische Farmer auf Zwiebel Feld in Kunar, Afghanistan

افغان کاشتکاروں کو افیون کی کاشت سے روکنے کے لئے بھی رقم کی ضرورت ہے

اب تک جرمن فوج منشیات کے انسداد کی کوششوں سے مکمل لا تعلقی اختیار کئے ہوئے ہے، اِس ڈر سے کہ پھر جرائم پیشہ گروہ اور اسمگلر جرمن فوجیوں کے لئے زیادہ خطرناک ہو جائیں گے۔ افغان وزیر ماحول جنرل خدائے داد نے جرمن فوج کی اِس حکمتِ عملی کو ہدفِ تنقید بناتے ہوئے کہا: ’’دہشت گرد ہوں یا منشیات کا کاروبار کرنے والے، یہ ایک ہی چیز ہیں۔ جرمن فوجیوں، تعمیرِ نو کے شعبے میں مصروفِ عمل جرمن ٹیموں یا پھر نیٹو فوجی دَستوں کو اُن سے گریز کرنے کی بجائے اُن کا سامنا کرنا چاہیے۔‘‘

افغانستان افیون کی پیداوار کے اعتبار سے دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔ صرف ایک صوبے ہیلمند میں ہی منشیات کی پیداوار پورے ملک کولمبیا کی پیداوار سے زیادہ ہے۔ افغان کاشتکاروں کو افیون کی کاشت سے روکنے کے لئے بھی رقم کی ضرورت ہے۔ جو بھی افغان صوبہ منشیات سے پاک ہو جاتا ہے، اُسے آج کل زرِ تلافی کے طور پر ایک ملین ڈالر دئے جاتے ہیں۔

Kai Küstner/ امجد علی/ افسر اعوان