1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمن عدالت نے مہاجر کے خلاف اور فیس بک کے حق میں فیصلہ کیوں دیا؟

چانسلر انگیلا میرکل کے ساتھ ایک مہاجر کی تصویر سوشل میڈیا پر سامنے آئی تھی، تاہم اس مہاجر کو جعلی تصاویر میں اسلامی شدت پسند کے روپ میں دکھایا جاتا رہا۔

اس مہاجر کی تصاویر کو استعمال کر کے نسل پرست اس کے خلاف تشدد کو ہوا دیتے آئے ہیں۔ تاہم جرمن عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ امریکی ادارہ فیس بک کسی شخص سے متعلق ایسے تصاویر ڈھونڈ ڈھونڈ کر ہٹانے کے ذمہ دار قرار نہیں دیا جا سکتا۔

19 سالہ شامی مہاجر انس مودامانی نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ یورپ میں اس سماجی رابطے کی ویب سائٹ کے نمائندے فیس بک آئرلینڈ لمیٹڈ سے کہا جائے کہ وہ اس کے حوالے سے جھوٹی خبروں اور اطلاعات کو روکے۔ اس نوجوان مہاجر کی جعلی تصاویر جھوٹی خبروں کے ساتھ فیس بک پر لاتعداد مرتبہ شیئر کی جاتی رہی ہے۔

Facebook-Prozess in Würzburg - Anas Modamani (Getty Images/AFP/T. Kienzle)

انس کو فیس بک پر جعلی تصاویر میں شدت پسند بنا کر پیش کیا گیا

عدالت سے کہا گیا تھا کہ فیس بک کو پابند بنایا جائے کہ وہ مودامانی کی تصاویر کو پوری تن دہی سے تلاش کر کے ڈیلیٹ کرے۔ عدالت میں مودامانی کے وکیل چن جو جُن کا موقف تھا کہ فیس بک اپنے نظام کے تحت مودامانی کے چہرے کو خودکار انداز سے تلاش کرنے کی اہلیت کا حامل ہے، اس لیے یہ تصاویر ویب سائٹ پر نہیں ہونا چاہیں۔ چن جو جُن نے عدالت کو بتایا کہ فیس بک اسی نظام کے تحت کاپی رائٹ میوزک اور برہنہ تصاویر کو تلاش کر کے ہٹاتا رہتا ہے۔

تاہم جج نے کہا کہ ایسی تصاویر کے حوالے سے فیس بک کی بجائے ان افراد پر ذمہ داری عائد ہوتی ہے، جو ایسی جعلی تصاویر پوسٹ کرتے ہیں، اس لیے اس کے لیے فیس بک کو جواب دہ قرار نہیں دیا جا سکتا۔ عدالت نے تاہم کہا کہ کسی اور سماعت میں آئی ٹی ماہرین سے اس بابت پوچھا جائے گا کہ اس سلسلے میں کیا کچھ کیا جا سکتا ہے۔

اس عدالتی فیصلے پر مودامانی کے وکیل نے ’افسوس‘ کا اظہار کیا ہے۔ ان کا تاہم کہنا ہے کہ وہ اس عدالتی فیصلے کے خلاف اعلیٰ عدلیہ سے رجوع کرنے کا ارادہ نہیں رکھتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اس مقدمے کی وجہ سے انہیں بھی سوشل میڈیا پر دھمکیوں کا سامنا ہے۔