1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمن صدر کوہلر کی اپنے جنوبی کوریائی ہم منصب سے ملاقات

جنوبی کوریا کے دورے پر گئے ہوئے جرمن صدر ہورسٹ کوہلر نے پیر کو اپنےجنوبی کوریائی ہم منصب لی مِیُونگ بک کے ساتھ مذاکرات کے بعد کہا کہ عالمی مالیاتی منڈیوں کی بہتر نگرانی کے لئے برلن اور سیئول کا نقطہ نظر ایک ہے۔

default

جرمن صدر ہورسٹ کوہلر اور ان کی اہلیہ ایفا کوہلر

وفاقی جرمن صدر ہورسٹ کوہلر نے آج پیر کے روز اپنے جنوبی کوریائی ہم منصب لی مِیُونگ بک کے ساتھ ملاقات کے بعد یہ بھی کہا کہ مالیاتی منڈیوں کی بہتر نگرانی کے لئے واضح ضابطے تشکیل دئے جانا چاہییں۔

سیئول میں اپنے جنوبی کوریائی ہم منصب کے ساتھ مذاکرات کے بعد جرمن سربراہ مملکت ہورسٹ کوہلر نے پیر کے روز کہا کہ بین الاقوامی مالیاتی نظام کو ایسے ضوابط کی ضرورت ہے، جن کے ذریعے مالی ادائیگیوں سے متعلق موجودہ نظام مزید بہتر اور شفاف بنایا جا سکے۔

Horst Köhler und Manmohan Singh

جنوبی کوریا سے قبل جرمن صدر کوہلر بھارت کے دورے پر تھے، جہاں انہوں نے وزیر اعظم من موہن سنگھ اور صدر پرتیبھا پاٹل کے ساتھ ملاقاتیں کیں

ہورسٹ کوہلر نے کہا کہ عالمی مالیاتی اور اقتصادی نظام میں اصلاحات سے متعلق جرمنی اور جنوبی کوریا کی سوچ ایک دوسرے سے مکمل طور پر ہم آہنگ ہے۔ جرمن صدر نے لی مِیُونگ بک کے ساتھ اپنی بات چیت کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جنوبی کوریائی صدر کے ساتھ مذاکرات میں انہوں نے کئی مختلف موضوعات پر کھل کر بات چیت کی۔ ان موضوعات میں تجارتی تعلقات، بیس کے گروپ کی اگلی سربراہی کانفرنس اور مستقبل میں دونوں کوریائی ریاستوں کا دوبارہ اتحاد بھی شامل تھے۔

ہورسٹ کوہلر کے بقول صدر لی کے ساتھ ان کی گفتگو میں یہ بات بھی کھل کر زیر بحث آئی کہ بین الاقوامی مالیاتی منڈیوں میں سرمایہ کاری کرنے والے اداروں کے بینکار اگر بڑی غلطیاں کرتے ہیں، تو ان کی قیمت عام ٹیکس دہندگان کو ادا نہیں کرنا چاہیے۔ سیئول میں اپنے باضابطہ مذاکرات کے دوران جرمن صدر نے اس ممکنہ آزاد تجارتی معاہدے کی بھی حمایت کی، جس کے آپس میں طے پا جانے کی جنوبی کوریا اور یورپی یونین مشترکہ طور پر کوششیں کر رہے ہیں۔ سیئول اور برسلز کے مابین اس معاہدے سے متعلق بات چیت ابھی تک جاری ہے، اور توقع ہے کہ یہ معاہدہ اسی سال مئی تک طے پا جائے گا۔

جنوبی کوریائی صدر لی مِیُونگ بک نے ہورسٹ کوہلر کے ساتھ اپنی ملاقات میں سیئول کی اس خواہش کا اظہار بھی کیا کہ جرمنی یورپ میں جنوبی کوریا کا سب سے بڑا تجارتی ساتھی ملک ہے، اور جنوبی کوریا چاہتا ہے کہ جرمنی کے ساتھ اس کے اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو مزید ترقی دی جائے۔

اس موقع پر جنوبی کوریائی صدر نے جرمن سربراہ مملکت سے اسی سال موسم خزاں میں ہونے والی بیس کے گروپ کی اس سربراہی کانفرنس کے کامیاب انعقاد کے حوالے سے مدد کی درخواست بھی کی، جو گیارہ اور بارہ نومبر کو سیئول میں ہو گی اور جس کی میزبانی کے علاوہ صدارت بھی جنوبی کوریا ہی کرے گا۔

جرمنی اور کوریا کے بارے میں ایک اور قدر مشرک یہ بھی ہے کہ آج کی دونوں کوریائی ریاستوں کی طرح ماضی میں جرمنی بھی ایک منقسم ریاست تھا۔ مشرقی اور مغربی حصوں پر مشتمل دو مختلف ریاستیں، جو قریب دو عشرے قبل دوبارہ متحد ہو گئی تھیں۔ اس کے برعکس شمالی اور جنوبی کوریا ابھی بھی نہ صرف دو مختلف ریاستیں ہیں، بلکہ ایک دوسرے کی حریف بھی۔ تاہم ان کے دوبارہ اتحاد کی کوششیں بھی اب تک جاری ہیں۔ اس حوالے سے اپنے جرمن ہم منصب کے ساتھ ملاقات میں جنوبی کوریائی صدر نے کہا کہ دوبارہ اتحاد جرمنی کا ایک ایسا تجربہ ہے، جو مستقبل میں دونوں کوریاؤں کے دوبارہ اتحاد کے عمل میں بہت مددگار ثابت ہو سکتا ہے۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: گوہر نذیر گیلانی