1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمن صدر ترکی میں :مذہبی آزادی کے فروغ کی کوششیں

وفاقی جرمن صدر کرسٹیان وولف پیر 18 اکتوبر سے ترکی کا چار روزہ دورہ شروع کر رہے ہیں۔ اپنے اس دورے کے دوران جرمن صدر ترکی میں مذہبی آزادی کے فروغ کی کوششیں کریں گے۔

default

جرمن صدر نے 3 اکتوبر کو منقسم جرمنی کے دوبارہ اتحاد کی بیسویں سالگرہ کے موقع پر مسیحیت اور یہودییت کے بعد اب اسلام کو بھی اپنے ملک کا ایک اہم حصہ قرار دیا تھا۔ جرمن صدر کے اُن بیانات کی جہاں جرمنی میں آباد مسلم برادری اور اپوزیشن لیڈروں کی جانب سے پذیرائی ہوئی تھی وہاں جرمنی کے قدامت پسند مسیحی حلقوں کی طرف سے وولف پر کڑی تنقید بھی کی گئی۔ تاہم جرمن صدر مسلم اکثریت والی سیکیولر ریاست ترکی کے دورے پر کوشش کریں گ کہ وہاں آباد تقریباً 1 لاکھ مسیحی باشندوں کو ان کی بھرپورمذہبی آزادی حاصل ہو۔

Blick auf den Bosporus und Istambul, Türkei

ترکی یورپ اور ایشیاء کے سنگم پر واقع ہے

پیر کے روز انقرہ میں جرمن صدر اپنے ترک ہم منصب عبداللہ گُل اور ترک وزیر اعظم رجب طیب اردوان کے ساتھ ملاقات کریں گے۔ منگل کو جرمن صدر ترکی کی نیشنل اسمبلی سے خطاب کریں گے۔ کسی جرمن سربراہ مملکت کا پہلی بار ترک قومی اسمبلی سے خطاب ہو گا۔

کرسٹیان وولف سے پہلے اُن کے پیش رو ہارسٹ کوہلر نے بھی ترکی کے دورے کا پلان بنایا تھا اور وولف کے اس دورے کو جرمنی صدر کے معمول کے متعدد دوروں میں سے ایک سمجھا جا سکتا تھا تاہم اس کی نوعیت مختلف ہے۔ اس کا اندازہ اس سے لگا یا جا سکتا ہے کہ جرمنی میں کئی ہفتوں سے تارکین وطن کے انضمام کا موضوع گرما گرم مباحثوں کا باعث بنا ہوا ہے۔ اس بحث کا مرکزی نقطہ دراصل ترک تاریکن وطن اور ترک نژاد جرمن ہیں۔

Türkei Istanbul Moschee

جرمن صدر استنبول کی مشہور بلیو مسجد بھی جائیں گے

ایک طرف تو جرمنی کے کرسچن قدامت پسند حلقوں میں قومی شناخت کے بحران اور تارکین وطن کے انضمام کے موضوع کو ایک دوسرے کے ساتھ نتھی کر کہ اس پر نہایت سنجیدہ بحث کی جا رہی ہے دوسری جانب جرمنی کو ایک کثیرالثقافتی جمہوریہ بنانے کے خواہشمند جرمن صدر کرسٹیان وولف ترکی جا رہے ہیں۔ ان کے ایک جملے ’ اب اسلام بھی جرمنی کا حصہ بن گیا ہے‘ کے عوض انہیں اپنے ہی سیاسی حلقوں کی طرف سے کڑی مذمت کا سامنا کرنا پڑا تاہم اُن کے ترک ہم منصب عبداللہ گُل نے نہ صرف وولف کے بیانات کا خیرمقدم کیا بلکہ انہیں اپنی مکمل حمایت کا یقین بھی دلایا۔ عبداللہ گُل میزبانی کے تمام تر تقاضے پورے کرتے ہوئے ڈیڑھ دن تک جرمن صدر کے ساتھ ترکی کے مختلف مقامات کا دورہ کریں گے۔ جرمن صدر گُل کے آبائی شہر قیصری بھی جائیں گے۔

Türkei NATO Generalsekretär Anders Fogh Rasmussen und Emine Erdogan in Ankara

نیٹو کے سیکریٹری جنرل اندرس فوگ راسموسن بھی ترکی کا دورہ کر چُکےہیں

جرمن صدر کے ترکی کے اس دورے کا ایک اہم مقصد اُن کی طرف سے مذہبی رواداری کا بھرپور اظہار ہے۔ کرسٹیان وولف جہاں استنبول کی مشہور زمانہ ’ بلیو مسجد‘ جائیں گے وہاں وہ ترکی کے مسیحی تاریخی ورثوں کے حامل مقامات کا دورہ بھی کریں گے۔

ترکی کی یورپی یونین میں شمولیت کی مخالفت مسیحیت کے غلبے والے دیگر یورپی ممالک کے ساتھ ساتھ جرمنی کے کرسچیئن سیاسی حلقے کھُل کر کرتے ہیں۔ اس کی جگہ استنبول کو یورپی اتحاد کے ایک مراعت یافتہ ساتھی کی حیثیت سے قبول کرنے کے لئے یہ سب تیار ہیں۔ تاہم کرسٹیان وولف بظاہر ترکی پر یورپی یونین کے دروازے بند رکھنے کے حامی نہیں ہیں۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس