1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمن زبان مہاجر بچوں کی تعلیم کی راہ میں بڑی رکاوٹ

گزشتہ برس جرمنی پہنچنے والے تارکین وطن میں ایک بڑی تعداد بچوں کی ہے۔ جرمن حکومت نے اِن بچوں کے تعلیمی سلسلے کا آغاز کیاہے تاہم جرمن زبان اِس راستے میں بڑی رکاوٹ ہے۔

Deutschland Flüchtlingskinder in einer Schule in Duisburg (picture-alliance/dpa/M. Skolimowska)

گزشتہ برس جرمنی آنے والے نو لاکھ تارکینِ وطن میں ایک تہائی افراد نا بالغ تھے

پندرہ سالہ مصطفیٰ کے لیے جرمن زبان سیکھنے کے عمل میں سب سے مشکل مرحلہ اِس زبان کی گرامر ہے۔ اُس کے ہم جماعت مجد کا بھی یہی خیال ہے۔ جرمن زبان میں حرفِ علت کی تبدیلی اِن دونوں شامی لڑکوں کے لیے بڑا مسئلہ ہے۔ لیکن وہ کوئی شکایت نہیں کر رہے بلکہ اپنے آبائی وطن میں جنگ زدہ حالات سے نکلنے سے لے کر یورپ کے دشوار سفر کرنے کے بعد اب اسکول دوبارہ شروع ہونے پر دونوں بہت خوش ہیں۔

 ہر نو عمر مہاجر کی طرح مصطفیٰ اور مجد کے لیے بھی اسکول آنا معمول کی زندگی کی طرف پہلا قدم ہے۔ مصطفیٰ اور مجد کے خاندان  گزشتہ برس جرمنی آنے والے نو لاکھ مہاجرین میں شامل ہیں۔ اِن تارکینِ وطن میں ایک تہائی افراد نا بالغ تھے۔ جرمنی کے لیے ایک بڑا چیلنج  اِن کم عمر مہاجر بچوں کو اپنے اسکول سسٹم میں ضم کرنا ہے۔

لیکن اِس رستے میں درپیش رکاوٹوں کو دور کرنا آسان کام نہیں۔ زیادہ تر مہاجر بچے جب جرمنی پہنچتے ہیں تو وہ جرمن زبان سے یکسر  نا بلد ہوتے ہیں اور اُنہیں اسکول کی شکل دیکھے ہوئے اگر سال نہیں تو کئی ماہ گزر چکے ہوتے ہیں۔ یہی نہیں بلکہ بہت سے بچوں کے تعلیم کی راہ میں وہ خوف بھی رکاوٹ بنتا ہے جس کا سامنا وہ اپنے ملکوں میں جنگ کے دوران کر چکے ہوتے ہیں۔

Syrien Flüchtlingskinder in einer Schule in Damaskus (picture-alliance/dpa/Itar Tass/M. Pochuyev)

مرجان کا کہنا ہے کہ اُن کے پرانے اور نئے اسکول میں فرق یہ ہے کہ یہاں لڑکے اور لڑکیاں ایک ساتھ پڑھتے ہیں

جرمنی میں اساتذہ کے سب سے بڑے یونین بورڈ کی رکن اِیکا ہوف مَن کا کہنا ہے، ’’ یہ ایک بہت بڑا چیلنج ہے۔ ‘‘

 ہوف مَن کے اندازے کے مطابق پناہ گزین بچوں کی اِس بڑی تعداد کو اسکولوں میں داخل کرنے کے لیے جرمنی کو 24،000 اساتذہ بھرتی کرنے کی ضرورت ہے۔ ہوف مَن کا کہنا ہے کہ اسکولوں میں نفسیاتی ماہرین اور کونسلرز کی ضرورت اِس کے علاوہ ہے۔ ہوف مَن نے خبر رساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا، ’’ صدماتی کیفیّت کا اظہار مختلف طریقوں سے ہوتا ہے۔ اِس سے نمٹنے کے حوالے سے ہماری تیاری اچھی نہیں۔ ‘‘

 مصطفیٰ اور مجد فرینکفرٹ شہر کے مضافات میں واقع ایک قصبے حوخ ہائیم کے اسکول میں زیر تعلیم ہیں۔ چودہ سالہ افغان بچی مرجان کو بھی اسی اسکول میں رجسٹر کیا گیا ہے۔ مرجان نے اے ایف پی کو بتایا، ’’ میرا رابطہ جرمن بچوں سے بہت زیادہ نہیں لیکن سب بہت اچھے ہیں۔ ‘‘

Deutschland Musikstunde mit Flüchtlingskindern und deutschen Kindern in einer Schule in Margetshöchheim (picture-alliance/dpa/D. Karmann)

جرمنی کے لیے ایک بڑا چیلنج  اِن کم عمر مہاجر بچوں کو اپنے اسکول سسٹم میں ضم کرنا ہے

 مصطفیٰ کاکہنا ہے کہ جرمن بچوں سے رابطے بڑھانے اور پڑھائی میں اب بھی سب سے بڑی رکاوٹ جرمن زبان ہی ہے۔ مصطفیٰ کا کہنا تھا، ’’ ٹیچر اتنا تیز  بولتے ہیں کہ  میں بہت کم سمجھ پاتا ہوں۔ ‘‘ مرجان کا کہنا ہے کہ اُن کے پرانے اور نئے اسکول میں فرق یہ ہے کہ یہاں لڑکے اور لڑکیاں ایک ساتھ پڑھتے ہیں لیکن مرجان کے نزدیک یہ اچھی بات ہے۔ مصطفیٰ کو کراٹے کا جنون کی حد تک شوق ہے لیکن چونکہ وہ اِس میں کوئی مستقبل نہیں دیکھتا اِس لیے اُس نے پائلٹ بننے کا فیصلہ کیا ہے۔ مرجان ابھی تک فیصلہ نہیں کر سکی کہ وہ میک اپ آرٹسٹ بننا چاہے گی یا وکیل۔ تاہم مجد کا پورے اعتماد سے کہنا تھا۔ ’’ میں گریجویٹ کروں گا اور پولیس افسر بنوں گا۔

 

 

 

 

 

DW.COM

Audios and videos on the topic