1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جرمن خاتون بشپ کا مستعفی ہونے کا اعلان

جرمنی کے لوتھرین کلیسا کی خاتون بشپ ماریا ژیپ زن نے اپنی جانب الزام تراشی کی انگلیاں اٹھائے جانے کے عمل کے بعد اپنے منصب سے مستعفی ہونے کا اعلان کردیا ہے۔

default

ہیمبرگ سے تعلق رکھنے والی پینسٹھ سالہ پروٹیسٹنٹ بشپ نے ایک پریس کانفرنس میں واضح کیا کہ ان کی دیانت داری کو شک کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے اور اس باعث وہ اپنے رب اور مذہبی عبادت کے فرائض کو جاری رکھنے کی پوزیشن میں نہیں رہی ہیں۔

جرمن میڈیا کے مطابق ماریا ژیپ زن کو عوامی غیض وغضب کا نشانہ اس وقت بننا پڑا جب ان کے ایک ساتھی پادری نے ستر اور اسی کے دہائیوں میں نوعمر لڑکے اور لڑکیوں کو اپنی جنسی ہوس کا نشانہ بنایا تھا۔ مختلف حلقے خیال کرتے ہیں کہ ان واقعات سے ماریا ژیپ زن باقاعدہ طور پر آگاہ تھیں۔ دوسری جانب سینئر پاردری نے اپنے گناہوں کا اعتراف کر لیا ہے۔ جرمن ذرائع ابلاغ نے ایک خاتون کی داد رسی کو رپورٹ کیا ہے۔ اس خاتون نے اپنے ساتھ ہونے والی زیادتی کا واویلہ کرتے ہوئے بتایا کہ اس نے اس زیادتی کا ذکر سن 1999ء میں ماریا ژیپ زن سے کیا تھا۔

Bischöfin Jepsen Rücktritt

پینسٹھ سالہ ماریا ژیپ زن پہلی خاتون بشپ بنائی گئی تھیں

لوتھرین چرچ کی راہبہ ماریا ژیپ زن کے خلاف عدالت نے جنسی فعل کے لئے ہراساں کرنے کے الزامات کو ابتدا ہی سے مسترد کردیا تھا۔ سن 1992ء میں ژیب زن کو پہلی پروٹیسٹنٹ خاتون بشپ بننے کا اعزاز حاصل ہوا تھا۔

جرمنی میں کلیسا کے اندر مختلف ادوار میں بچوں کے ساتھ جنسی زیادتیوں کا ذکر ابتدا میں رومن کیتھولک کلیسا پر تنقید کی روشنی میں ظاہر ہوا تھا۔ ایک سینئر جرمن بشپ والٹر میکسا نے اسی تناظر میں اس سال اپریل میں اپنے منصب سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

عالمی سطح پر چرچ کے پادریوں کو ماضی میں جنسی کھیل کھیلنے کے حوالے سے عوامی سطح پر گہری تنقید کا سامنا ہے۔ خیال رہے کہ رومن کیھولک کلیسا کے سربراہ پوپ بینیڈکٹ سولہ مختلف الاوقات میں معافی پیش کر چکے ہیں۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM