1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

 جرمنی، گزشتہ برس مہاجرین پر بیس بلین یورو کے اخراجات

 ایک رپورٹ کے مطابق اس خطیر رقم کا ایک چوتھائی حصہ اُن مہاجرین کی مد میں خرچ ہوا جو اپنی پناہ کی درخواستوں پر فیصلے کا انتظار کر رہے ہیں جبکہ نصف رقم جبری مہاجرت کے اسباب کے سد باب پر خرچ کی گئی۔

Deutschland Asylbewerber in Berlin Symbolbild (Getty Images/S. Gallup)

5.5 بلین یورو کی رقم ایسے مہاجرین پر خرچ کی گئی جن کی پناہ کی درخواستوں پر کارروائی ابھی مکمل نہیں ہوئی

 جرمن حکومت کی جانب سے جاری ایک رپورٹ کے اعداد وشمار کے مطابق حکومت نے نو اعشاریہ تین بلین یورو اپنی سولہ ریاستوں کو مہاجرین کی دیکھ بھال پر ہونے والے اخراجات کے لیے فراہم کیے جبکہ 11 بلین یورو جبری مہاجرت اور غیر قانونی نقل مکانی کے اسباب کی روک تھام کے لیے اٹھائے جانے والے اقدامات پر خرچ ہوئے۔

رپورٹ کے مطابق 5.5 بلین یورو کی رقم ایسے مہاجرین پر خرچ کی گئی جن کی پناہ کی درخواستوں پر کارروائی ابھی مکمل نہیں ہوئی اور جنہیں جرمن حکومت کی جانب سے ابھی تک مہاجر کی حیثیت نہیں دی گئی۔ دو بلین یورو جرمنی میں مہاجرین کے انضمام کے مختلف منصوبوں پر خرچ ہوئے جبکہ 400 ملین یورو پناہ گزینوں کی رہائش کی مد میں لگے۔

 350 ملین یورو ایسے کم عمر مہاجرین کی دیکھ بھال پر خرچ کیے گئے جو بغیر کسی سرپرست کے جرمنی آئے۔ سن 2015 میں وسیع پیمانے پر تارکینِ وطن کی جرمنی آمد پر جرمن رائے عامہ بڑی حد تک مثبت رہی۔

Deutschland junge Flüchtlinge - Integration (Getty Images/S. Gallup)

350 ملین یورو ایسے کم عمر مہاجرین کی دیکھ بھال پر خرچ کیے گئے جو بغیر کسی سرپرست کے جرمنی آئے

رائے عامہ کے مختلف جائزوں کی رُو سے قریب چالیس فیصد جرمن شہریوں کا یہ ماننا تھا کہ اُن کا ملک مہاجرین کے بحران سے متعلق چیلنجز سے نمٹنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ جرمن وزارتِ خزانہ کے مطابق 11 بلین یورو ایسے منصوبوں پر لگائے گئے جو مہاجرت کا سبب بننے کی وجوہات کی بیخ کنی کے لیے شروع کیے گئے ہیں۔

 سن 2015 میں جرمنی میں قریب دس لاکھ مہاجرین کی آمد کے بعد سے چانسلر انگیلا میرکل کی ملک میں مشرقِ وسطی اور افریقی ممالک سے تعلق رکھنے والے تارکینِ وطن کے آزادانہ داخلے کی پالیسی کو بہت تنقید کا سامنا رہا ہے۔ تاہم گزشتہ ایک برس میں حکومت کی جانب سے پناہ کے سخت قوانین متعارف کرانے کے بعد سے جرمنی میں مہاجرین کی آمد میں نمایاں کمی ہوئی ہے۔

DW.COM