1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جرمنی کی افریقہ پالیسی

براعظم افریقہ میں امن فوج اور پولیس کی تربیت سے لے کر، سرحدی حدود کی تعین تک جرمنی کا کردارانتہائی اہم رہا ہے۔

default

جرمن دارلحکومت برلن میں یہ بات ایک بارپھرسننے میں آئی کہ تنازعات کی روک تھام اور دیرپا امن کی بحالی کو براعظم افریقہ سے متعلق جرمن سیاست میں سب سے زیادہ اہمیت حاصل ہے۔ اس موقع پرافریقی یونین کے امن و سلامتی کے کمشنرRamtane Lamamra بھی موجود تھے جنہوں نے سیاسی نمائندوں کے ساتھ اپنی ملاقاتوں میں افریقی ممالک میں سلامتی کے شعبے میں ہونے والی پیش قدمی کے بارے میں بتایا۔

افریقہ میں امن کی بحالی کا مطلب یہ نہیں کہ باغیوں سے ہتھیار واپس لے لئے جائیں یا افریقی یونین کے فوجیوں کو کسی بحران زدہ ملک میں بھیج دیا جائے۔ افریقی یونین میں امن و سلامتی کے امور کے کمشنرRamtane Lamamra کے مطابق افریقہ میں دیرپا امن کی بحالی اورتنازعات کا خاتمہ اسی وقت ممکن ہے جب عام شہریوں میں غربت کا خوف ختم ہو جائے، تعلیمی شعبہ ترقی کرے اورعلاج معالجے کی یکساں سہولیات بھی موجود ہوں۔ مختصر یہ کہ بنیادی انسانی حقوق کی پاسداری کی جائے۔

Ramtane Lamamra کہ مطابق ’ سلامتی کی اصطلاح کو وسیع ترانداز میں دیکھنا ہو گا۔ یہاں بات امن و سلامتی کے ساتھ ساتھ تنازعات کی روک تھام سے لے کر تنازعات کے بعد تعمیرنو تک کی ہے۔ یعنی بات دراصل افریقہ میں اشتراک عمل ، مزید ترقی اور معاشرتی انضمام کی ہے‘

Deutschland Berlin Fachtagung Im Dialog mit Afrikas Eliten

برلن میں گذشتہ دنوں ہونے والی افریقہ کانفرنس کا منظر

یہی وجہ ہے کہ افریقی ممالک نے ایک دوسرے کے داخلی معاملات میں مداخلت نہ کرنے کا اپنا اصول بھی تبدیل کر دیا ہے۔ اب جہاں بھی انسانی حقوق کی شدید خلاف ورزیوں کا معاملہ سامنے آتا ہے، افریقی یونین ان کی روک تھام کے لئے فوری اقدامات کرتی ہے۔ افریقی یونین کی امن اور سلامتی سے متعلق مشاورتی کونسل مختلف ملکوں میں فوجی دستو‌ں کی تعیناتی کا فیصلہ کرتی ہے اور یہ کونسل بھی Ramtane Lamamra کے زیر سایہ کام کررہی ہے۔

اس مشاورتی کونسل کو عالمی بینک اور یورپی یونین کا تعاون بھی حاصل ہے جن کی مدد کے بغیر افریقی یونین قیام امن کے سلسلے میں اپنے ارادوں پرعمل درآمد تو کیا، شدید مالی دباؤ کا شکار بھی ہو جائے گی۔ اس لئے کہ افریقی یونین کے مسلح دستے آج بھی ہتھیاروں اور جدید سازوسامان کی کمی کا شکار ہیں۔ مثلا یوگنڈا اور برونڈی میں یونین نے اپنے فوجی تو بھیجے ہیں لیکن ان کی تعداد بہت کم ہے۔ Lamamra

Horst Köhler in Ruanda

جرمن صدر ہورسٹ کوئلر روانڈا میں اسکول کے بچوں کے ساتھ

نے اس بارے میں کہا کہ افریقی ممالک کودرپیش یہ مشکلات اپنی جگہ لیکن ان کو اپنا یہی کردار زیادہ سے زیادہ حد تک خود ادا کرسکنے کی سوچ اپنانا ہو گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ افریقی ریاستوں کو اس امر کو ضروری اہمیت دینا ہو گی کہ یونین کے منصوبوں کے لئے مالی وسائل کی فراہمی بنیادی طور پرخود انہی کا فرض ہے۔ دوسری اہم بات یہ کہ افریقی یونین جتنی زیادہ فعال ہو گی، اتنا ہی افریقی ملکوں کی ذمے داریوں میں بھی اضافہ ہوتا جائے گا۔

افریقی ملکوں کا ایک بڑا مسئلہ دہشت گردی بھی ہے۔ Ramtane Lamamra کہتے ہیں کہ افریقہ میں دہشت گردی میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اور دہشت گردی کے رجحانات پر قابو پانے کے لئے افریقی یونین نے اپنی ایک نئی حکمت عملی بھی تیار کی ہے۔

اس سلسلے میں ایک ایسی فورس تیار کی جائے گی جس میں پولیس کے ساتھ ساتھ عام شہریوں کو بھی شامل کیا جائے گا اور یہ فورس اگلے سال سے باقاعدہ کام کرنے کے قابل ہو جائے گی۔