1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمنی: چاقو حملہ آور ذہنی مریض ہے، ’’مسلم انتہا پسند نہیں‘‘

صوبہ باویریا کے وزیر داخلہ یوآخم ہیر مان نے کہا ہے کہ میونخ کے قریب چاقو سے حملہ کرنے والا نفسیاتی مسائل کا شکار ہے۔ ان کے بقول اس حملے کا مسلم انتہا پسندی سے کوئی تعلق ثابت نہیں ہو سکا۔

صوبہ باویریا کے وزیر داخلہ یوآخم ہیرمان کے مطابق ستائیس سالہ حملہ آور صرف نفسیاتی مریض ہی نہیں بلکہ وہ منشیات کا مسائل کا شکار بھی ہے۔ ان کے مطابق اس نوجوان نے اپنا جرم قبول کر لیا ہے۔ وزارت داخلہ کے ترجمان اولیور پلاٹزر کہتے ہیں،’’ ابھی تک ہمیں ایسے کوئی شواہد نہیں ملے ہیں، جن کی بنیاد پر یہ کہا جائے کہ یہ حملہ اسلامی انتہا پسندی کی وجہ سے کیا گیا ہے۔ تاہم تحقیقات بدستور جاری ہیں۔‘‘

پولیس کے مطابق دس مئی کی صبح پانچ بجے ایک شخص نے میونخ کے قریبی علاقے گرافنگ کے ریلوے اسٹیشن پر چاقو سے حملہ کرتے ہوئے چار افراد کو زخمی کر دیا۔

ان میں ایک پچاس سالہ شخص کچھ ہی دیر بعد زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا جبکہ دیگر زخمی ہونے والوں کی عمریں 43,55 اور 58 سال ہیں۔ طبی ذرائع نے بتایا ہے کہ زخمی ہونے والے دیگر تین شہریوں کی حالت خطرے سے باہر ہے۔ یہ شہر صوبہ باویریا کے دارالحکومت میونخ سے تیس کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔

گرافنگ کی میئر اینگیلیکا اوبر مائر نے اس واقعے پر حیرانی کا اظہار کیا ہے،’’ہم صوبہ باویریا کے میونخ خطے کا ایک چھوٹا سا پر امن شہر ہیں۔ اس طرح کا کوئی واقعہ ہمارے لیے بالکل نیا ہے اور ہم حیرت میں مبتلا ہیں۔ ہمارے علاقے کے لوگ اس طرح کی خبریں صرف ٹیلی وژن پر دیکھتے ہیں۔ یہاں بھی ایسا کچھ ہو سکتا ہے یہ ناقابل یقین ہے۔‘‘

وفاقی وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر نے کہا کہ دارالحکومت برلن سے وہ اس واقعے پر کوئی تبصرہ نہیں کرنا چاہتے اور نہ ہی اس کے محرکات پر۔ جرمن وزارت داخلہ نے حملہ آور کی شناخت پاؤل ایچ کے نام سے ظاہر کی ہے اور وہ صوبے ہیسے کا رہنے والا ہے۔ اس بیان کے مطابق وہ جرمن شہری ہے اور اس کا تارکین وطن پس منظر نہیں ہے،’’ ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ کیا اس واقعے کے اور بھی محرکات ہیں یا اس کا تعلق صرف نشے کی لت اور ذہنی مسائل سے ہے؟ ان سوالات کے جوابات معلوم کرنے کی کوششیں جاری ہیں‘‘۔