1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی پناہ کی ایک لاکھ درخواستوں کا دوبارہ جائزہ لے گا

جرمن وزارتِ داخلہ کے مطابق ایک لاکھ کے قریب مہاجرین کی پناہ کی درخواستوں کی دوبارہ جانچ کی جائے گی۔ ازسرنو جانچ کے عمل میں اٹھارہ سے چالیس سال کی عمر کے مرد تارکین وطن کی درخواستیں بالخصوص شامل کیا جائیں گی۔

Deutschland Symbolbild Identitätsprüfung von Flüchtlingen (picture-alliance/dpa/U. Anspach)

مقدمات کی از سر نو پڑتال کا آغاز موسم گرما میں شروع کر دیا جائے گا

خبر رساں ادارے اے پی کی رپورٹوں کے مطابق وفاقی جرمن وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر نے بدھ کے روز صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پناہ کی دو ہزار درخواستوں کی دوبارہ پڑتال میں  جرمن فوج کے لیفٹینینٹ فرانکو اے جیسا کوئی دوسرا کیس نہیں ملا اور یہ کہ لیفٹیننٹ فرانکو اے کا کیس اس تناظر میں اپنی نوعیت کا واحد کیس تھا۔

ڈے میزیئر کا کہنا تھا کہ وزارتِ داخلہ نے جرمنی کے وفاقی دفتر برائے مہاجرت اور ترک وطن (بی اے ایم ایف) کو  اسّی ہزار سے ایک لاکھ پناہ کے کیسوں کی دوبارہ جانچ کا حکم دیا ہے۔ مقدمات کی از سر نو پڑتال کا آغاز موسم گرما میں شروع کر دیا جائے گا۔

جرمنی میں دہشت گردانہ حملے کا منصوبہ بنانے والے ملکی فوج کے لیفٹیننٹ فرانکو اے نے سن 2015 میں اپنے ہی ملک کے دو مختلف شہروں میں بطور شامی مہاجر سیاسی پناہ کی درخواستیں دائر کیں، جن میں سے ایک کو منظور کر لیا گیا تھا۔

 پناہ کی درخواست کی منظوری کے بعد فرانکو اے کو مہاجرین کے ایک رہائشی مرکز میں جگہ بھی فراہم کر دی گئی تھی اور اسے حکومت کی طرف سے تارکین وطن کے لیے مختص سرکاری مالی امداد بھی ملنے لگی تھی۔

ویڈیو دیکھیے 01:59

جرمنی ميں جسم فروشی پر مجبور مرد پناہ گزين

بعد ازاں ایسی اطلاعات سامنے آئی تھیں کہ فرانکو اے اور اس کے دو ساتھی جرمنی میں دہشت گردانہ حملوں کی منصوبہ بندی کر کے اُن کا الزام مہاجرین پر عائد کرنا چاہتے تھے۔

جرمنی کی وفاقی حکومت، سکیورٹی ادارے اور مہاجرین کے امور سے متعلق دیگر ادارے جرمن فوجی کا کیس منظر عام پر آنے کے بعد سے اس کی تحقیقات کرنے اور ملک میں رائج پناہ کے طریقہ کار کو مزید سخت کرنے کے عزم کا اظہار کر رہے ہیں۔

Audios and videos on the topic