1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی: نابالغ مہاجرین کی شادیوں کی منسوخی کا قانون

جرمن کابینہ آج بدھ کے روز ایسے مہاجرین کی شادیوں کی منسوخی کے مجوزہ قانون پر بات کرے گی جو اٹھارہ سال سے کم عمر ہیں۔ اس نئے قانون کو رواں برس جولائی تک پارلیمانی منظوری حاصل ہو جائے گی۔

Kinderhochzeit in Afghanistan - Braut (picture-alliance/dpa/F. Kaimy)

یہ اقدام پناہ گزینوں کے حالیہ بحران کے بعد اٹھارہ سال سے کم عمر متعدد جوڑوں کی شادیوں کے تناظر میں کیا جا رہا ہے

یہ اقدام پناہ گزینوں کے حالیہ بحران کے بعد اٹھارہ سال سے کم عمر متعدد جوڑوں کی شادیوں کے تناظر میں کیا جا رہا ہے۔ یہ قانون خاص طور پر اُن مہاجر بچیوں کو تحفظ فراہم کرنے کے بنایا جا رہا ہے، جن کی شادیاں بچپن میں ہی ان کے ملکوں میں کر دی گئی تھیں۔
اس مجوزہ قانون کے نفاذ کے بعد ایسی بچیوں کو کم عمر افراد اور نوجوانوں کے لیے فلاح و بہبود کا کام کرنے والے سماجی کارکنوں کی زیرِ نگرانی دے دیا جائے گا خواہ اُن کی شادی اپنے ملک میں قانونی طور پر ہی کیوں نہ ہوئی ہو۔ اگر ضروری سمجھا گیا تو اِن نو عمر لڑکیوں کو اُن کے شوہروں سے الگ بھی کر دیا جائے گا۔ 
جرمن وزیرِ انصاف ہائیکو مَاس نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو ایک بیان میں کہا،’’ ان شادیوں کا کسی آفس یا کسی شادی ہال میں اندراج نہیں ہے۔ ہمیں نا بالغ افراد کی ایسی کسی بھی شادی کو تسلیم نہیں کرنا چاہیے جو اُن کی نشوونما کے لیے نقصان دہ ہوں۔ جس قدر ممکن ہو نا بالغ افراد کو اس سے محفوظ رکھنا چاہیے۔‘‘

Flash-Galerie 60 Jahre Genfer Flüchtlingskonvention (APImages)

سولہ سال سے کم عمر میاں بیوی کی اپنے ممالک میں شادیاں جرمنی میں باطل تصور کی جاتی ہیں


 جرمن وزیرِ انصاف نے مزید کہا کہ اس تبدیلی کے نتیجے میں کسی بھی کم عمر فرد پر اُس کی جرمنی میں پناہ اور رہائشی حیثیت پر کوئی اثر نہیں پڑنا چاہیے۔ جرمنی میں شادی کے لیے عمر سولہ سے بڑھا کر اٹھارہ سال کر دی جائے گی۔ فی الحال بعض صورتوں میں ایک اٹھارہ سالہ کسی بھی فرد کو سولہ سالہ سے شادی کی اجازت ہے۔ 
سولہ سال سے کم عمر میاں بیوی کی اپنے ممالک میں شادیاں جرمنی میں باطل تصور کی جاتی ہیں جبکہ سولہ اور سترہ سال کے نا بالغ افراد کی شادیوں کو جرمن فیملی کورٹس میں منسوخ کیا جا سکتا ہے۔
کم عمر افراد کی شادیاں منسوخ کرنے کا قانون ایسے جوڑوں کو استثنا فراہم کر سکتا ہے، جن کی شادی کم سنی میں ہوئی لیکن  اب وہ بالغ ہیں اور ساتھ رہنا چاہتے ہیں۔ تاہم ایسا بہت کم صورتوں میں ہو گا۔   

DW.COM