1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمنی میں جوہری توانائی کے خلاف ملک گیر مظاہرے

وفاقی جمہوریہ جرمنی میں آج ہفتے کے روز بیس بڑے شہروں میں ایٹمی توانائی کے خلاف مظاہروں کا انعقاد ہو رہا ہے۔ ان مظاہروں کو جوہری توانائی کے خلاف جرمنی میں ہونے والے اب تک کے سب سے بڑے مظاہرے قرار دیا جا رہا ہے۔

default

25 اپریل 2011 ء کو یورپی سطح پر ایٹمی توانائی کے خلاف مظاہرے ہوئے تھے

ان مظاہروں کا مقصد وفاقی جرمن حکومت پر دباؤ ڈالنا ہے کہ وہ جاپان کے حالیہ زلزلے اور سونامی لہروں کے سبب فوکوشیما کے ایٹمی ری ایکٹر سے خارج ہونے والی تابکار شعاؤں کی لائی ہوئی تباہی سے سبق حاصل کرتے ہوئے جرمنی کے تمام ایٹمی پلانٹس بند کر دینے کا فیصلہ کرے۔

آج کے ان مظاہروں کا موٹو ہے’ جوہری توانائی ختم‘۔ ماحولیاتی تحفظ کے لیے سرگرم متعدد تنظیموں، ایٹمی توانائی کی مخالف پیش قدمیوں، لیبر یونینوں اور کلیساؤں کے تعاون سے سابق جرمن دارالحکومت بون سمیت بیس شہروں میں ان مظاہروں کا انعقاد ہو رہا ہے۔ محض برلن میں آج ہونے والے مظاہرے میں 30 ہزار سے زائد مظاہرین کی شرکت متوقع ہے۔ پولیس اور منتظمین کے مطابق آج ہونے والے ملکگیر مظاہرے جرمنی میں ایٹمی توانائی کے خلاف اور تمام جوہری تنصیبات بند کرنے کا مطالبہ کرنے والوں کے 26 مارچ کو ہونے والے مظاہروں سے کہیں زیادہ زور دار ہوں گے۔ ان میں ڈھائی لاکھ سے زائد مظاہرین حصہ لیں گے۔

NO FLASH Anti-Atomkraft Demonstrationen in Deutschland

جرمنی میں جوہری توانائی کے مخالفین کچھ عرصے سے مظا ہروں کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں

یہ مظاہرے ایک ایسے وقت میں ہو رہے ہیں جب برلن میں وفاقی حکومت کی طرف سے تشکیل کردہ "ایتھک کمیشن" جرمنی کے سات سب سے پرانے ایٹمی بجلی گھروں کو تین ماہ تک کے لیے بند کر دینے کے گزشتہ مارچ میں جاری ہونے والے احکامات اور آئندہ کی حکمت عملی کے بارے میں کسی حتمی فیصلے پر بات چیت کر رہا ہے۔ اقتصادی اور سائنسی شعبوں سمیت مختلف کلیساؤں سے تعلق رکھنے والے 17 ترجمانوں کے مابین اس سلسے میں مذاکرات آج پورے دن جاری رہیں گے جس کے نتائج کل اتوار کو جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے سامنے پیش کیے جائیں گے۔ چانسلر دفتر کی اطلاعات کے مطابق اتوار ہی کو مخلوط حکومت کے چوٹی کے نمائندوں کا اجلاس چانسلر دفتر میں منعقد ہوگا جس میں جرمنی کی ایٹمی تنصیبات کے مستقبل اور جوہری توانائی کو ختم کرنے کے بارے میں فیصلہ کُن بحث کی امید کی جا رہی ہے۔ وفاقی جرمن حکومت ایٹمی توانائی کی پیداوار اور استعمال کو بتدریج ختم کرتے ہوئے 2018 ء سے 2022ء تک اسے حتمی شکل دینے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

Anti Atomkraft Demonstrationen vor dem Kanzleramt in Berlin

گزشتہ مارچ میں برلن میں چانسلر دفتر کے باہر جوہری توانائی کے خلاف ہونے والا مظاہرہ

قبل ازیں گزشتہ جمعے کو جرمنی کے تمام 16 صوبوں کے وزرائے ماحولیات نے مشترکہ طور پر حکومت سے مطالبہ کیا تھا کہ جرمنی کے سات جوہری پلانٹس کی عارضی بندش کو مستقل فیصلہ قرار دے دیا جائے۔ اس بارے میں رفاقی حکومت نے جاپان کے فوکوشیما ایٹمی بجلی گھر میں زلزلے اور سُونامی کے بعد پیدا ہو جانے والی سنگین صورتحال کے پیشِ نظر وسط مارچ میں جرمنی کے سات سب سے پرانے ایٹمی بجلی گھروں کو تین ماہ تک کے لیے بند کر دینے کے احکامات جاری کیے تھے۔ اب وفاقی حکومت جون میں ان ایٹمی بجلی گھروں کے حوالے سے کوئی حتمی فیصلہ کرنے والی ہے۔

کرسچن ڈیمو کریٹک یونین سی ڈی یو کی سربراہ اور جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے فو کو شیما کے سانحے کے بعد جرمنی کی جوہری پالیسی پر نظر ثانی اور ملک میں پائے جانے والے تمام 17 ایٹمی پلانٹس کو بند کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ ساتھ ہی میرکل نے ایٹمی توانائی کی جگہ قابل تجدید توانائی کی پیداوار پر تمام تر توجہ مرکوز کرنے کی بھی بات کی تھی۔

جرمنی میں کُل 17 ایٹمی پلانٹس قائم ہیں جن میں سے آٹھ اب اتنے کار آمد نہیں رہے ہیں۔ سات ایٹمی ری ایکٹرز کے علاوہ آٹھواں ری ایکٹر ’ کریومل‘ شمالی جرمنی میں ہے جو کئی سالوں سے تکنیکی نقص کے باعث تقریباً ناکارہ ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: شامل شمس

DW.COM

ویب لنکس