1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی میں اسلام: مسلم تارکین وطن کی آمد ’فائدہ مند‘

اسلامی علوم کے معروف جرمن ماہر ڈاکٹر بلند اُچار کا کہنا ہے کہ مختلف مسلم ممالک سے آنے والے تارکین وطن جرمنی میں اسلام کے اس مجموعی تشخص میں تنوع کی وجہ بنیں گے، جس پر اب تک زیادہ تر ’ترک مسلم پہچان‘ کی چھاپ ہے۔

ڈاکٹر بلند اُچار جرمنی کے شمالی شہر اوسنابروک میں قائم اسلامی تعلیمات کے ادارے کے سربراہ ہیں۔ جرمن کلیسائی نیوز ایجنسی ای پی ڈی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ مہاجرین کے موجودہ بحران کے دوران عرب اور کرُد مسلمانوں کی آمد سے جرمنی میں اسلام کے اب تک کے تشخص میں تنوع پیدا ہو گا۔

جرمنی میں آباد مسلمانوں میں قریب 60 فیصد تعداد ترک نژاد ہے۔ ساٹھ کی دہائی میں لاکھوں ترک باشندے ’مہمان مزدوروں‘ کے طور پر جرمنی آئے تھے۔

پروفیسر ڈاکٹر اُچار کا کہنا ہے کہ جرمنی میں اس وقت آباد مسلمانوں کے برعکس دوسرے ممالک سے آنے والے مسلم تارکین وطن کی پرورش زیادہ تر روایتی اسلامی معاشروں میں ہوئی ہے۔ ان کے مطابق، ’’یہ بات معاشرے کے مسلم حصے کی کثیرالجہتی کا سبب بنے گی جو کہ ظاہر ہے کہ ایک مثبت عمل ہے۔ دونوں طرح کے مسلمان (پہلے سے یہاں آباد اور نئے آنے والے مسلم تارکین وطن) ایک دوسرے سے کافی کچھ سیکھ سکیں گے۔‘‘

اوسنابروک انسٹیٹیوٹ آف اسلامک اسٹڈیز کے سربراہ کے بقول نئے مسلم تارکین وطن کے باعث جرمنی میں ’مسلمانوں کی مرکزی کونسل‘ کہلانے والی نمائندہ ملکی تنظیم کے اثر و رسوخ میں بھی اضافہ ہو گا۔

تاہم بلند اُچار نے خبردار کیا کہ مسلمان مہاجرین کی آمد کے بعد ملک میں اسلام کی سخت گیر اور بنیاد پرستانہ تشریحات کو ترویج بھی مل سکتی ہے۔ لیکن ساتھ ہی اُچار نے یہ تسلیم بھی کیا کہ ابھی ’ہمیں نئے آنے والے مسلمانوں کے مذہبی فہم سے متعلق بہت کم معلومات دستیاب ہیں‘۔

ڈاکٹر اُچار کا مزید کہنا تھا کہ زیادہ تر شام سے جرمنی آنے والے مہاجرین اپنے وطن میں ایک کثیرالمذہبی معاشرے میں رہتے رہے ہیں۔ شام میں مسلم اور مسیحی عقائد کے باشندے صدیوں سے پرامن طور پر ایک دوسرے کے ساتھ رہتے رہے ہیں۔ اُچار نے کہا، ’’دراصل جرمنی ایسے انسانوں کے تجربات سے بہت فائدہ اٹھا سکتا ہے۔‘‘

Deutschland Salafisten in Frankfurt/Main

ایسے خدشات بھی پائے جاتے ہیں کہ مسلمان مہاجرین کی آمد کے بعد جرمنی میں اسلام کی سخت گیر اور بنیاد پرستانہ تشریحات کو ترویج بھی مل سکتی ہے

پروفیسر بلند اُچار کی رائے میں ’دولت اسلامیہ‘ اور دیگر مذہبی بنیاد پرست گروپوں کی عسکریت پسندی سے بھاگ کر آنے والے تارکین وطن شدت پسند رجحانات نہیں رکھتے۔ ’’یہ لوگ صدمے کا شکار ہیں۔ وہ اچھی طرح جانتے ہیں کہ مذہبی جنونیت کے ساتھ زندہ رہنے کا تجربہ کیسا ہوتا ہے۔‘‘

ڈاکٹر اُچار نے ای پی ڈی کو بتایا کہ تارکین وطن کے جرمن معاشرے میں انضمام کے لیے اقدامات کرنا اور انہیں جمہوری حقوق و فرائض کے بارے میں آگاہ کرنا جرمن حکومت کی ذمہ داری ہے، تاہم اسی عمل میں مساجد اور مسلم ثقافتی مراکز کو بھی اپنا کردار ادا کرنا ہو گا۔

اسلامی علوم کے اس ترک نژاد جرمن ماہر کے نزدیک مجموعی طور پر نئے آنے والے مسلم تارکین وطن میں ہم آہنگی کے احساس کو تقویت دینا بھی بہت ضروری ہو گا۔ ’’ہمیں انہیں دکھانا ہو گا کہ یہ تارکین وطن بھی اپنے اپنے مذہب اور قومیت سے قطع نظر، تمام تر شہری حقوق اور آزادیوں کے ساتھ جمہوری جرمن معاشرے کا حصہ ہیں۔‘‘