1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

 جرمنی: مہاجر بچوں کے لیے سماجی بہبود کا معیار گرانے کا مطالبہ

جرمنی کی صوبائی حکومتوں نے تنہا پناہ گزین بچوں کے لیے سماجی بہبود کا معیار مروّجہ معیار سے کم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ یونیسف کے مطابق یہ اقدام پہلے سے ذہنی صدمے کا شکار ان بچوں کو منفی رحجانات کی جانب مائل کر سکتا ہے۔

Oberhausen Kirche Flüchtlingsunterkunft Kinder (Reuters/I. Fassbender)

 جرمن صوبوں نے وفاقی حکومت سے یہ مطالبہ کیا ہے کہ اُنہیں مہاجر بچوں کے حوالے سے اپنے قوانین اور ضابطے خود بنانے کی اجازت دی جائے

جرمنی کی صوبائی حکومتوں نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا ہے کہ وہ وفاق سے نا بالغ مہاجر بچوں کی سماجی سطح پر دیکھ بھال کے لیے مختص سروسز کا معیار کم کرنے کی اجازت دینے کا مطالبہ کریں گی تاکہ پیسوں کی بچت کی جا سکے۔

 شمالی جرمنی کے شہر راسٹاک میں ہونے والی ایک کانفرنس میں جرمنی کی سولہ ریاستوں کے سربراہان نے برلن سے کم عمر مہاجرین کے لیے کیے جانے والے سماجی کام  کی ’یوتھ ہاؤسنگ‘ کے نام سے نئی درجہ بندی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

 اس اقدام سے صوبائی حکومتیں اُن سوشل ورکرز کی تعداد میں کمی لا سکیں گی جو تارکینِ وطن بچوں کی مدد کے لیے مامور کیے جاتے ہیں۔ مہاجرین بچوں کے لیے بنائے گئے موجودہ سوشل سسٹم میں ہر چار سے پانچ بچوں کے لیے ایک سماجی کارکن کو تعینات کیا جاتا ہے جبکہ نئی درجہ بندی کے بعد یہ تعداد کم ہو کر دس بچوں یا اِس سے بھی زیادہ پر ایک سماجی کارکن رہ جائے گی۔

 جرمنی کی ریاستی حکومتوں کی اِس مجوزہ تبدیلی کو سماجی بہبود کے لیے سرگرم تنظیموں کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ سماجی تنظیموں نے اِسے امتیازی سلوک قرار دیا ہے۔

Kinder Fahrrad Notunterkunft Düsseldorf (Reuters/I. Fassbender)

سن دو ہزار پندرہ میں قریب پچاس ہزار ایسے پناہ گزین بچے جرمنی پہنچے تھے جو سرپرستوں کے بغیر تھے

 نوجوانوں اور بچوں کی بہبود کے لیے کام کرنے والے سابقہ ڈائریکٹر اور سماجی کارکن وُلف گانگ ھامر نے جرمن اخبار ’ٹاز‘سے بات کرتے ہوئے کہا،’’ اس قرارداد کا مطلب یہ ہے کہ مہاجرت کا سفر کر کے جرمنی پہنچنے والے تنہا بچوں کے لیے سماجی دیکھ بھال کا معیار جرمن بچوں کے مقابلے میں بد تر ہو گا۔‘‘

 جرمن صوبوں کی جانب سے وفاقی حکومت سے یہ مطالبہ کیا گیا ہے کہ اُنہیں مہاجر بچوں کے حوالے سے اپنے قوانین اور ضابطے خود بنانے کی اجازت دی جائے تاکہ اِن بچوں کی رہائش اور دیگر ضروریات کے لیے مختص اخراجات کو محدود کیا جا سکے۔

 یہ قرارداد جن ریاستوں کی جانب سے پیش کی گئی اُن میں پانچ صوبے وہ ہیں جن میں جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین کی حکومت ہے۔ علاوہ ازیں باویریا کی صوبائی حکومت نے بھی قرارداد کی حمایت کی ہے۔

 خیال رہے کہ سن دو ہزار پندرہ میں قریب پچاس ہزار ایسے پناہ گزین بچے جرمنی پہنچے تھے جو سرپرستوں کے بغیر تھے۔ اِن تنہا مہاجر بچوں کو بعدازاں جرمنی بھر میں تقسیم کر دیا گیا تھا۔

DW.COM