1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی: مال برادر ٹرین سے پاکستانی اور افغانی مہاجر برآمد

جرمنی کے شہر میونخ میں فائر فائٹرز اور وفاقی پولیس کے اہلکاروں نے ریلوے یارڈ میں ایک مال بردار بوگی میں  سے پانچ مہاجرین کو باہر نکالا ہے۔ ان تارکینِ وطن میں سے مبینہ طور پر ایک پاکستانی جبکہ چار افغانی باشندے ہیں۔

Griechenland Idomeni Flüchtlingslager (DW/L. Scholtyssyk)

حفاظتی وجوہات کی بنا پر فائر بریگیڈ کے عملے اور پولیس نے ٹرین میں لدے باقی چھتیس کنٹینرز کی جانچ پڑتال کی

جرمن صوبے باویریا کے دارالحکومت میونخ میں پولیس نے آج بدھ کی سہ پہر بتایا ہے کہ ٹرین ڈرائیور کو گزشتہ روز اپنے کام کے اختتام پر ٹرین میں لدی  مال برادر بوگیوں میں سے ایک میں سے مسلسل دستک اور الارم بجنے کی آوازیں سنائی دیں جس کے بعد سیل شدہ کنٹینر کو کھولنے کے لیے امدادی کارکنوں کو بلایا گیا۔

 اِن امدادی کارکنوں نے کنٹینر کی سِیل کو کھولا  تو اُنہیں وہاں  پانچ مرد مِلے جو تارکینِ وطن تھے۔ ان مبینہ پناہ گزینوں میں سے چار کا تعلق افغانستان سے جبکہ پانچواں شخص پاکستان کا شہری نکلا۔

 پولیس کے مطابق پانچوں تارکینِ وطن کی صحت اچھی تھی اور اُن کے پاس کھانے پینے کی چیزیں بھی تھیں۔ لہذاٰ ایمبولینس بلانے کی ضرورت نہیں پڑی۔ جرمن وفاقی پولیس کے مطابق یہ مال برادر ٹرین ترکی سے جرمنی پہنچی تھی۔ ابتدائی طور پر اِس حوالے سے معلومات حاصل نہیں ہو سکیں کہ یہ مہاجرین  کہاں اور کیسے کنٹینر میں سوار ہوئے۔ پولیس حکام تفتیشی عمل جاری رکھے ہوئے ہیں۔

 حفاظتی وجوہات کی بنا پر فائر بریگیڈ کے عملے اور پولیس نے ٹرین میں لدے باقی چھتیس کنٹینرز کی جانچ پڑتال کی اور انسانوں کی بو سونگھنے والے ایک شکاری کتے کو بھی تلاش کے عمل میں شامل کیا گیا۔ پولیس کو مال برادر ٹرین میں مزید تارکینِ وطن تو نہیں ملے تاہم اُسے ایسے اشارے ضرور ملے ہیں کہ اِن کنٹینرز میں ماضی میں بھی افراد کو چھپا کر یورپ پہنچایا گیا ہو گا۔

DW.COM