1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی: خود کشی کرنے والے مہاجر کے ہمسایوں کے خلاف تحقیقات

جرمن صوبے تھیورنگیا کی پولیس کے مطابق خود کشی کرنے والے ایک صومالی مہاجر لڑکے کے پڑوسیوں کے خلاف تحقیقات جاری ہیں۔ ان پڑوسیوں پر الزام ہے کہ انہوں اس لڑکے کو خود کشی پر اکسایا تھا۔

Deutschland Thüringen Stadt Schmölln (picture-alliance/dpa/J.-P. Kasper)

شموئلن کے میئر سوَین شراڈے کے مطابق اس واقعے کے دوران تماشائیوں کے طور پر وہاں کئی افراد دیر تک موجود رہے تھے

جرمن صوبے تھیورنگیا کے چھوٹے سے شہر شموئلن کے میئر سوَین شراڈے کے مطابق ایسی اطلاعات ہیں کہ اس واقعے کے دوران تماشائیوں کے طور پر وہاں کئی افراد دیر تک موجود رہے تھے اور ایسی آوازیں بھی سنائی دے رہی تھیں: ’’آگے بڑھو، چھلانگ لگاؤ۔‘‘ شراڈے نے مزید کہا، ’’اس قسم کے عمل کی صرف مذمت ہی کی جا سکتی ہے۔ اگر کوئی اسے فلموں میں نظر آنے والے خود کشی کے واقعات میں سے ایک سمجھ کر ایسے کسی واقعے کی حوصلہ افزائی کے لیے کسی دوسرے کو اکساتا ہے، تو یہ ایک نا قابل یقین بات ہے۔‘‘

شموئلن کے ایک مقامی اہلکار ماتھیاس برگ مان نے جرمن نشریاتی ادارے ایم ڈی آر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا، ’’اس سانحے کے دوران کچھ افراد قریب کی بالکونیوں سے بظاہر تصاویر بناتے بھی نظر آئے۔‘‘

ایم ڈی آر کے مطابق خود کشی کرنے والا صومالی مہاجر نوجوان رواں برس اپریل سے اس علاقے میں مقیم تھا۔ کہا گیا ہے کہ ڈپریشن میں مبتلا یہ سترہ سالہ مہاجر قریب ایک ہفتے تک ایک نفسیاتی علاج گاہ میں زیر علاج بھی رہا تھا۔ اپنی اس حالت کا ذکر مرنے والے نے شموئلن میں رہائش پذیر اور اپنے شناسا دیگر نوجوان تارکین وطن سے بھی کیا تھا۔

شموئلن کے مئیر شراڈے نے فیس بک پر اپنی ایک پوسٹ میں لکھا، ’’پڑوسیوں کی جانب سے اس لڑکے کا خود کشی پر اکسایا جانا نہ صرف قابل مذمت ہے بلکہ ایک غیر انسانی فعل بھی ہے، اس سے قطع نظر کہ کوئی مقامی باشندہ ہے یا مہاجر۔ آخر ہم سب انسان ہیں۔‘‘

گزشتہ برس قریب آٹھ لاکھ نوے ہزار مہاجرین اور تارکینِ وطن جرمنی پہنچے تھے۔ ان لاکھوں پناہ گزینوں کی جرمنی آمد کے بعد سے ملک میں سماجی سطح پر اجانب دشمنی اور مہاجر مخالف جذبات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔



 

DW.COM