1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی: بارہ ہزار سے زائد افغان مہاجرین کی واپسی

جرمن حکومت اگلے کچھ عرصے میں ہزاروں افغان مہاجرین کو واپس اُن کے وطن روانہ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اگر واپسی کا عمل یہ مکمل ہو گیا تو جرمنی سے پہلی مرتبہ اتنی بڑی تعداد میں افغان مہاجرین کی واپسی ہو گی۔

ایک جرمن اخبار نوئے اوسنابرُؤکر سائٹنگ نے حکومتی دستاویز کے حوالے سے بتایا ہے کہ اگلے کچھ عرصے میں بارہ ہزار سے زائد افغان مہاجرین کو اُن کے ملک روانہ کر دیا جائے گا۔ رپورٹ کے مطابق ان پناہ کے متلاشی افغانوں کے انٹرویوز کے بعد متعلقہ حکام نے اُن کی بیان کی گئی پناہ گزینی کی وجوہات کو مسترد کر دیا ہے۔

حکام نے یہ بھی بتایا ہے کہ ان ہزاروں افغان مہاجرین کو واپس بھیجنے کی ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ افغانستان کا بہت بڑا حصہ مسلح افراتفری سے متاثر نہیں ہے۔ جرمن حکومت نے ان مہاجرین کی واپسی کا بیان پارلیمنٹ میں دیا ہے۔ جرمنی کی بائیں بازو کی بڑی اپوزیشن پارٹی ’ڈی لِنکے‘ نے مہاجرین کی واپسی کے حوالے سے جو تفصیلات طلب کی تھی، اُس کے جواب میں برلن حکومت نے پارلیمنٹ میں بارہ ہزار سے زائد افغان مہاجرین کی واپسی کا بتایا۔

Deutschland Protest gegen Abkommen zur Flüchtlingspolitik in Düsseldorf (DW/S. Ali)

جرمن دارالحکومت برلن میں وطن واپسی کے خلاف مظاہرہ کرنے والے افغان مہاجرین

اخبار نوئے اوسنابرُؤکر سائٹنگ  کے مطابق پارلیمنٹ میں دیے گئے جواب میں بتایا گیا کہ اِس وقت جرمنی میں دو لاکھ سینتالیس ہزار رجسٹرڈ افغان مہاجرین ہیں اور اُن کا تقریباً پانچ فیصد بہت جلد واپس روانہ کیا جا رہا ہے کیونکہ زیادہ تر افغان علاقے مسلح انتشار کی لپیٹ میں نہیں ہیں۔ اس تناسب سے واپس بھیجے جانے والے افغانوں کی تعداد بارہ ہزار 539 بنتی ہے۔

حکومتی بیان میں اس توقع کا بھی اظہار کیا گیا کہ کئی افغان مہاجرین رضاکارانہ طور پر بھی واپسی کے لیے تیار دکھائی دیتے ہیں۔ اس بیان میں یہ بھی واضح کیا گیا کہ ایسے افغان مہاجرین بھی ہیں جن کو جبری طور پر واپس بھیجا جا سکتا ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق افغان مہاجرین کی جبری واپسی کسی حد تک متنازعہ عمل ہو سکتی ہے کیوں کہ کئی افغان علاقے تواتر سے عسکریت پسند طالبان کے حملوں کی زد میں دکھائی دیتے ہیں، جن میں قابل ذکر قندوز، لشکر گاہ اور مزار شریف جیسے شہر ہیں۔ مزار شریف میں جرمن قونصل خانے پر کیے گئے حملے میں چھ افراد ہلاک اور 125 سے زائد زخمی ہوئے تھے۔

رواں برس ابھی تک ستائیس افغانوں کو اُن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہونے کے بعد ان کے آبائی وطن واپس روانہ کیا جا چکا ہے۔ گزشتہ برس ایسے افغان مہاجرین کی تعداد محض نو تھا۔