1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

جرمنی:  افغان مہاجرین کو لے جانے والا جہاز نصف سے زائد خالی

جرمن حکومت نے تسلیم کیا ہے کہ وہ رواں ہفتے ملک بدر کیے جانے والے افغان مہاجرین میں سے نصف سے قدرے کم کو وطن واپس بھیج سکی کیونکہ متعدد افغان تارکینِ وطن چھپ گئے تھے۔

Abschiebung abgelehnter Asylbewerber nach Afghanistan (Reuters/R. Orlowski)

اب تک قریب 80 افغان مرد پناہ گزینوں کو اُن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہونے کے بعد وطن واپس بھیجا جا چکا ہے

جرمن وزارتِ داخلہ کے ترجمان توبیاس پلاٹے کا کہنا ہے کہ اُن پچاس افغان مہاجرین کو جن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہو چکی تھیں ، گزشتہ بدھ کے روز  وطن  واپس بھیجا جانا تھا لیکن روانگی کے وقت طیارے میں محض اٹھارہ افغان باشندے ہی سوار ہوئے۔

پلاٹے نے تاہم اس معاملے کی وضاحت اس طرح کی کہ اگر دوسری پروازوں پر مسافروں کی تعداد پر غور کیا جائے تو یہ تعداد رجسٹرڈ مسافروں کی تعداد سے ہمیشہ کم ہوتی ہے۔ وزارتِ داخلہ کے ترجمان کا کہنا تھا،’’ کچھ تارکینِ وطن گرجا گھروں میں چھپ جاتے ہیں یا پناہ حاصل کر لیتے ہیں۔‘‘ پلاٹے نے مزید کہا ،’’ ملک بدر کیے جانے والے مہاجرین کی پرواز کے وقت تعداد اُس صورت میں بھی کم ہوتی ہے جب انہیں جانے کی تاریخ اور پلان کی بابت وقت سے پہلے معلوم ہو جائے۔ اسی لیے حکومت نے کئی اقدامات اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے مثلاﹰ ایسی پروازوں کا اعلان قبل از وقت نہ کیا جائے۔‘‘

Abschiebung abgelehnter Asylbewerber nach Afghanistan - Proteste (Reuters/R. Orlowski)

برلن حکومت نے ایسے تارکین وطن کی ملک بدری کا سلسلہ تیز کر دیا ہے، جن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہو چکی ہیں

 افغان پناہ گزینوں کی رواں ہفتے ہونے والی ملک بدری مہاجرین کی جرمنی سے واپسی  کے تناظر میں گزشتہ دسمبر میں ہونے والے متنازعہ یورپی یونین افغانستان معاہدے کے سلسلے کی تیسری کڑی تھی۔ اب تک قریب 80 افغان مرد پناہ گزینوں کو اُن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہونے کے بعد وطن واپس بھیجا جا چکا ہے۔

 یہ امر اہم ہے کہ جرمن حکومت کو اس وقت مہاجرین کے سنگین بحران کا سامنا ہے۔ جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی مہاجرین سے متعلق فراخدلانہ پالیسی کی وجہ سے ملک میں مہاجر مخالف تحریکیں زور پکڑتی جا رہی ہیں جبکہ مختلف علاقوں میں غیر ملکیوں کے خلاف جرائم میں بھی اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔ اسی لیے برلن حکومت نے ایسے مہاجرین اور تارکین وطن کی ملک بدری کا سلسلہ تیز کر دیا ہے، جن کی پناہ کی درخواستیں مسترد ہو چکی ہیں۔

DW.COM