1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جرمنی: اسلام قبول کرنے والوں کی تعداد میں اضافہ

جرمنی میں 1980ء سے اب تک تقریباً 25 ہزار افراد دائرہ اسلام میں داخل ہو چکے ہیں۔ اُن سے ناراض اُن کے گھر والے سوال کرتے ہیں کہ تبدیلی مذہب کی وجہ کیا تھی اور وہ کونسی کشش ہے، جس نے اُنہیں اسلام کی جانب مائل کیا؟

ایک خاتون جرمن پرچم کے رنگوں کے حامل اسکارف میں

نکول 28 برس کی ہیں اور انہوں نے چند ہی برس پہلے اسلام قبول کیا ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ بچپن میں ان کا کوئی مذہب نہیں تھا اور یہ کہ اُنہوں نے 14 سال کی عمر میں بپتسمہ لیا کیونکہ وہ مذہب میں دلچسپی رکھتی تھیں۔ نکول، جو اب دو بچوں کی ماں بھی ہیں، کہتی ہیں کہ پادری اُن کے ہر سوال کے جواب میں ہمیشہ یہ کہہ دیا کرتا تھا کہ بس یہ سب کچھ ایسے ہی ہے، اِس لیے وقت کے ساتھ ساتھ وہ مسیحیت سے دور ہوتی چلی گئیں۔ اِس کے برعکس اُن کے خیال میں اسلام میں ہر بات کا واضح جواب موجود ہے۔

جرمن شہر آخن کے مسلمان کارکن منیر عزاؤئی مسلمانوں کی مرکزی کونسل کے پریس کے شعبے کے ترجمان ہیں

جرمن شہر آخن کے مسلمان کارکن منیر عزاؤئی مسلمانوں کی مرکزی کونسل کے پریس کے شعبے کے ترجمان ہیں

دریں اثناء نکول اسلام کے بارے میں کئی کتابیں پڑھ چکی ہیں اور اِس بات سے متاثر ہیں کہ ’اسلام میں کوئی تضاد نہیں ہے‘۔ نکول کے والدین اس کے فیصلے کا احترام کرتے ہیں تاہم وہ سر پر اسکارف کے ساتھ اُن کے سامنے نہیں جاتی کیونکہ یہ اُن کے لیے ناقابلِ برداشت ہے۔ اِسے دیکھ کر اُنہیں ایک ایسی خاتون کا خیال آتا ہے، جو اپنے باورچی خانے تک ہی محدود ہو کر رہ گئی ہو۔

35 سالہ ٹُولیا نے بھی اسلام قبول کیا لیکن عرب ملک شام سے تعلق رکھنے والے اپنے مسلمان شوہر کے ساتھ شادی کے بندھن میں بندھے رہنے کے کئی برسوں بعد۔ وہ کہتی ہیں کہ شروع میں اُنہیں مذہب کے ساتھ کوئی دلچسپی نہیں تھی۔ پھر جب ٹُولیا نے اسلام میں اپنے شوہر کی دلچسپی اور اسلام کی عملی تصویر دیکھی تو اُنہیں ’پتہ چلا کہ اسلام ہے کیا‘۔ تین بچوں کی ماں ٹُولیا کہتی ہیں کہ ’اسلام میں وہی بھائی چارہ، خلوص، خوش اخلاقی اور انسان کے اندر اچھائی دیکھنے کا وہی تصور ہے، جو مجھے بچپن میں والدین کی تربیت سے ملا تھا‘۔

کولون کی ایک مسجد میں سالانہ ’اوپن ڈے‘ کے موقع پر مقامی کمیونٹی کے ارکان مہمانوں کے ساتھ گفتگو کر رہے ہیں

کولون کی ایک مسجد میں سالانہ ’اوپن ڈے‘ کے موقع پر مقامی کمیونٹی کے ارکان مہمانوں کے ساتھ گفتگو کر رہے ہیں

جرمن شہر آخن کے مسلمان کارکن منیر عزاؤئی جرمنوں کے اسلام قبول کرنے کے تقریباً تین سو واقعات کے شاہد ہیں اور بتاتے ہیں کہ جرمنی میں لوگ اسلام کا قائل ہونے کے بعد ہی اسے اپنے مذہب کے طور پر اپناتے ہیں۔

ایسے کوئی واضح اعداد و شمار موجود نہیں ہیں، جن سے پتہ چل سکے کہ جرمنی میں دائرہ اسلام میں داخل ہونے والوں کی اصل تعداد کتنی ہے۔ شہر زوئیسٹ میں قائم اسلام آرکائیو کے سلیم عبداللہ بھی محض اندازہ لگاتے ہوئے بتاتے ہیں کہ جرمنی میں لگ بھگ 25 ہزار افراد اسلام قبول کر چکے ہیں۔

رپورٹ: حیبہ عمر / امجد علی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس