1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمنی:سلفی مسلمانوں کی ریلی اور اس کے خلاف مظاہرے

جرمنی کے شہر بریمن میں دائیں اور بائیں بازو کی سوچ کے حامل افراد نے سلفی اسلامی مبلغ پیئر فوگل کی ریلی کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا ہے۔ مظاہرے کے دوران پولیس کی بھاری نفری تعینات رہی۔

Deutschland Bremen Protest gegen Salafismus

یہ احتجاجی مظاہرے اور سلفی مسلمانوں کی ریلی شہر کے مرکزی ریلوے اسٹیشن کے قریب منعقد ہوئے

انتہائی قدامت پسند اسلامی تحریک ’سلفیت‘ کے مخالفین گزشتہ روز جرمنی کے شمال شہر بریمن میں سلفی اسلام کے مبلغ پیئر فوگل کی ریلی کے خلاف مظاہرے کرنے جمع ہوئے۔ پولیس کے مطابق دائیں بازو سے تعلق رکھنے والوں کے مظاہرے میں ایک سو پچاس جبکہ بائیں بازو کے نظریات کے حامل افراد کے مظاہرے میں قریب دو سو افراد شریک ہوئے۔ خود فوگل کی ریلی میں لگ بھگ تین سو افراد نے حصہ لیا تھا جن میں کچھ خواتین بھی شامل تھیں جنہوں نے برقعے پہن رکھے تھے۔

یہ احتجاجی مظاہرے اور سلفی مسلمانوں کی ریلی شہر کے مرکزی ریلوے اسٹیشن کے قریب منعقد ہوئے۔ دائیں بازو سے تعلق رکھنے والے مظاہرین ابتداء میں چاہتے تھےکہ وہ فوگل کی ریلی کے قریب ہی ان کے خلاف مظاہرہ کریں۔ اس موقع پر برقعے میں ملبوس ایک خاتون نے اسٹیج پر آ کر اپنا برقعہ بھی اتارنا تھا تاہم چند تکنیکی وجوہات کی بنا پر یہ ممکن نہیں ہو سکا۔ دوسری جانب بائیں بازو کے مظاہرین سلفی مسلمانوں اور دائیں بازو سے منسلک افراد دونوں کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ ان میں بریمن یونیورسٹی آف اپلائیڈ سائنسز کے طلباء بھی شامل تھے۔

Deutschland Bremen Polizeikontrollen bei Salafismus Kundgebung

ریلی کے موقع پرپولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی تھی

بریمن حکام فوگل کو سلفی نظریات پھیلانے کا بڑا ذریعہ سمجھتے ہیں۔ فوگل نے ریلی سے خطاب کرتے ہوئے ’’اسلامک اسٹیٹ اسلام نہیں ہے‘‘ کے موضوع پر بات کی۔ پیئر فوگل نے سن 2001 میں اسلام قبول کیا تھا۔ اگرچہ فوگل نے ہمیشہ اسلام میں دہشت گردی کے خلاف بات کی ہے تاہم جرمن حکومت کو خدشہ ہے کہ وہ بالخصوص نوجوانوں میں شدت پسندانہ مذہبی رحجانات میں اضافے کا ذریعہ نہ بن جائیں۔

بریمن شہر کو سلفی تحریک کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔ یہاں اس تحریک سے منسلک ساڑھے تین سو سے زائد ارکان رہائش پذیر ہیں۔ گزشتہ روز بریمن میں یہ اجتماعات ایک ایسے موقع پر ہوئے جب جرمنی میں بڑھتی ہوئی مذہبی شدت پسندی اور ملک کے اندر پیدا ہونے والے شدت پسندوں کی طرف سے دہشت گردی کے خطرات میں اضافے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

DW.COM