1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمنی:’’خالصتان زندہ باد فورس‘‘ کے دو ارکان گرفتار

جرمنی میں دو بھارتی شہریوں کو ایک سکھ دہشت گرد تنظیم ’’خالصتان زندہ باد فورس‘‘ میں شامل ہونے کے الزام میں گرفتار کر لیا گیا ہے۔ جرمن حکام کے مطابق یہ گرفتاریاں منگل کو ہی عمل میں آ گئی تھیں۔

default

سکھ زائرین گولڈن ٹیمپل میں

جرمن شہر کارلسروہے میں جرمن استغاثہ حکام کا کہنا ہے کہ 35 سالہ سکھ پریت ایس اور 41 سالہ جگتار ایس ایم کو فرینکفرٹ اور ڈسلڈورف کے قریب واقع چھوٹے شہروں اوفن باخ اور موئنشن گلاڈ باخ سے گرفتار کیا گیا تھا اور اُنہیں اگلے ہی روز جج کے سامنے پیش کر دیا گیا تھا۔ حکام کا کہنا ہے کہ ان دونوں بھارتی شہریوں پر ایک غیر ملکی دہشت گرد تنظیم کا رکن ہونے اور اسلحہ رکھنے سے متعلق قوانین کی خلاف ورزی کے الزامات ہیں۔

’’خالصتان زندہ باد فورس‘‘ (KZF) ایک تشدد پسند گروپ ہے، جو بھارت کے اُن علاقوں میں ایک آزاد سکھ ریاست تشکیل دینے کے لئے کوشاں ہے، جہاں سکھ اکثریت میں ہیں۔ یہ گروپ اُس ریاست کو ’’خالصتان‘‘ کا نام دیتا ہے۔

Goldener Tempel von Amritsar gestürmt

متحارب سکھوں کے درمیان لڑائی کا ایک منظر۔ بھارتی سکیورٹی فورسز نے پانچ جون 1984ء کو گولڈن ٹیمپل پر دھاوا بول دیا تھا، جس کے نتیجے میں خالصتان کے قیام کی جدوجہد کو سخت دھچکہ پہنچا تھا

جرمن استغاثہ حکام کے مطابق اِس تنظیم نے بارودی مواد، چھوٹے ہتھیار اور جعلی کرنسی اسمگل کر کے بھارتی ریاست پنجاب بھیجنے کی کوشش کی اور اِس کے یورپ میں سرگرم ارکان نے اِس کے لئے مالی وسائل اور عطیات فراہم کئے۔ مزید یہ کہ KZF نے یورپ کے گردواروں میں اعتدال پسند سکھ رہنماؤں کو طاقت استعمال کرتے ہوئے بھی ہٹانے اور بھارت سے باہر بسنے والی سکھ کمیونٹی کو اپنے کنٹرول میں لانے کی کوشش کی۔

بتایا گیا ہے کہ سکھ پریت ایس نے اس گروپ کے لئے ایک نیم خود کار ہتھیار گزشتہ برس خریدا تھا جبکہ جگتار ایس ایم نے ایسا ہی ایک ہتھیار اِس سال خریدا۔ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ اُس نے اِس کے لئے 1350 یورو ادا کئے تھے۔ جرمن حکام کے مطابق یہ دونوں غالباً 2009ء میں اِس تنظیم کے رکن بنے تھے۔ دونوں گرفتار شُدگان سے تفتیش کا سلسلہ جاری ہے۔

رپورٹ: امجد علی / خبر رساں ادارے

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس