1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جاپان کا جوہری بحران: خطرے کا لیول بڑھا دیا گیا

جاپان میں زلزلے سے متاثرہ جوہری پاور پلانٹ سے تابکاری کا اخراج مزید خطرناک ہوتا جا رہا ہے۔ حکام نے اس جوہری بحران کا لیول بھی پانچ سے بڑھا کر سات کر دیا ہے، جو بلند ترین سطح ہے۔

default

اس سے قبل یہ لیول چرنوبل کے جوہری حادثے پر لاگو کیا گیا تھا۔ فوکو شیما ڈائچی کے پلانٹ کی منتظم ٹوکیو الیکٹرک پاور کمپنی (ٹیپکو) نے منگل کو بتایا ہے کہ اس پلانٹ سے خارج ہونے والی تابکاری کی مقدار چرنوبل کی تباہی کی سطح عبور کر سکتی ہے۔

ٹیپکو کا کہنا ہے کہ پلانٹ سے تابکاری مواد اسی طرح خارج ہوتا رہا ہے تو یہ یوکرائن میں 1986ء میں آنے والی تباہی کی حد عبور کر سکتا ہے۔ دوسری جانب جاپان کی نیوکلیئر اینڈ انڈسٹریل سیفٹی ایجنسی کا کہنا ہے کہ اس وقت فوکو شیما سے تابکاری چرنوبل کے اخراج کے تناسب میں دس فیصد ہے۔

اس ایجنسی نے منگل کو فوکو شیما ڈائچی نیوکلیئر پاور پلانٹ پر حادثے کی سطح بڑھا کر سات کر دی، جسے بدترین قرار دی جاتی ہے۔ یہ سطح قبل ازیں چرنوبل کے حادثے کے وقت مقرر کی گئی تھی۔

فوکو شیما ڈائچی کے لیے خطرے کی یہ سطح مقرر کیے جانے کا اعلان جاپانی ایجنسی کی جانب سے اس بات کا تعین کیے جانے کے بعد کیا گیا کہ متاثرہ پلانٹ سے بڑی مقدار میں تابکاری کا اخراج ہو رہا ہے۔ اس سے وسیع تر علاقے میں انسانی صحت اور ماحول کو خطرہ لاحق ہے۔

Deutschland 60 Jahre Kapitel 4 1979 – 1989 Atomkatastrophe in Tschernobyl

یہ سطح قبل ازیں چرنوبل کے حادثے کے وقت مقرر کی گئی تھی

منگل کو جاپان میں ایک مرتبہ پھر زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کیے گئے۔ اس کے بعد متاثرہ پاور پلانٹ کے ایک حصے میں آگ بھی بھڑک اٹھی، جس پر قابو پا لیا گیا۔

تاہم خبررساں ادارے روئٹرز نے بعض ماہرین کے حوالے سے بتایا ہے کہ جوہری بحران کے لیے جاپان کی نئی ریٹنگ سے اصل حالات کی عکاسی نہیں ہوتی۔ ان کا کہنا ہے کہ اس بحران کا موازنہ چرنوبل کے جوہری حادثے سے نہیں کیا جا سکتا۔

نیوکلیئر انڈسٹری کے امریکی ماہر مرے جینکس کا کہنا ہے، ’یہ کسی طرح بھی اُس سطح کے قریب نہیں۔ چرنوبل کا حادثہ بہت خوفناک تھا۔ وہاں دھماکہ ہوا تھا اور اس پر قابو نہیں پایا جا سکا تھا۔‘

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس