1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

جائیداد کے معاملات، ہر پانچواں انسان رشوت دینے پر مجبور ہے

ایک بین الاقوامی ریسرچ کے مطابق دنیا بھر میں ہر پانچویں انسان کو جائیداد کی تقسیم میں استحصال کا سامنا ہوتا ہے۔ اِس سلسلے میں سب صحارا افریقی اقوام میں خواتین کو جنسی استحصال کا بھی سامنا کرنا پڑتا ہے۔

کرپشن معاملات پر نگاہ رکھنے والی بین الاقوامی تنظیم ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے ایک رپورٹ میں واضح کیا ہے کہ دنیا بھر میں ہر پانچویں انسان کو جائیداد کا حق حاصل کرنے میں مختلف مسائل اور دشواریوں کا سامنا ہوتا ہے۔ ان مسائل میں رشوت اہم ہے۔ رپورٹ میں بیان کیا گیا کہ خواتین اگر جائیداد میں حصہ یا اُسے اپنے نام ٹرانسفر کروانے کی خواہشمند ہوں تو انہیں بعض صورتوں میں جنسی استحصال کا سامنا بھی ہوتا ہے اور زمین الاٹ کرنے والے محکمے کے اہلکار کو رشوت کے عوض وہ اپنا بدن پیش کرنے پر مجبور ہو جاتی ہیں۔

ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے رپورٹ میں بیان کیا ہے کہ براعظم افریقہ میں خواتین بڑے ذوق و شوق سے کھیتی باڑی سے وابستہ ہیں اور اِس کی وجہ یہ ہے کہ وہ زرعی پیداوار سے اپنے خاندان کے افراد کی کفالت کرتی ہے۔ افریقی علاقے سب صحارا کی صحرائی ریاستوں کی خواتین نے رپورٹ مرتب کرنے والوں کو بتایا کہ انہیں جائیداد میں حصہ لینے اور اُس زمین کو اپنے نام ٹرانسفر کرنے کے لیے اہلکاروں کی جنسی تشفی بھی کرنی پڑتی ہے۔

Afrika Bauer Symbolbild German food partnership

ہے۔سب صحارا کے ملکوں میں زمین کے لین دین کے مسائل کو حل کروانے کے لیے ہر تیسرا آدمی رشوت دینے پر مجبور ہے

جرمن دارالحکومت برلن میں قائم بین الاقوامی غیرسرکاری تنظیم ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے اپنی رپورٹ عالمی بینک کی زمین اور غربت کے عنوان سے شروع ہونے والی بین الاقوامی کانفرنس کے موقع پر پیش کی ہے۔ رپورٹ کے مطابق سب صحارا کی ریاستوں کے علاوہ کئی دوسرے ملکوں میں کاشت کاری کے لیے زمین تک رسائی اور بعض خاندانی جائیداد سے حصے ملنے پر زمین کی آلاٹمنٹ یا خرید کے بعد اُس کا قبضہ منتقل کرنے کے سلسلے میں مرد و زن کو عموماً رشوت کی ادائیگی کرنا پڑتی ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ دنیا بھر میں ہر پانچویں شخص کو زمین کے معاملات کو حل کرنے کے لیے حکومتی محکمے کے اہلکاروں کو رشوت دینا پڑتی ہے اور غریب ملکوں میں ایسے معاملات میں یہ ایک معمول بن چکا ہے۔سب صحارا کے ملکوں میں زمین کے لین دین یا اِس سے جڑے مسائل کو بہتر انداز میں حل کروانے کے لیے ہر تیسرا آدمی رشوت دینے پر مجبور ہے۔ مالی رشوت کے علاوہ خواتین کو بھتے کی صورت میں سیکس بھی کروانا پڑتا ہے۔ یہ اُس صورت میں ضرورت سے زیادہ دیکھا گیا ہے، جب خواتین زمین کی خرید و فرخت یا اُسے اپنے نام آلاٹ کرانے کا عمل شروع کرتی ہے۔ افریقی ملک گھانا میں چالیس فیصد خواتین اور تیئیس فیصد مردوں کو رشوت دینے کے بعد ہی جائیداد کے معاملات میں راحت میسر ہوئی تھی۔