1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تیونس کی نئی حکومت مشکلات میں

پیر کی شام کو یاسمین انقلاب کے بعد وزیر اعظم محمد الغنوشی کی اعلان کردہ قومی حکومت چند گھنٹوں بعد ہی مشکلات کا شکار ہو گئی جب چار وزراء مستعفی ہوگئے اور ایک اپوزیشن جماعت نے حکومت چھوڑ نے کی دھمکی دی۔

default

قائم مقام صدر فوادالمبزع

قومی حکومت میں شامل چار وزراء نے اپنے استعفے پیش کردیے ہیں۔ دوسری جانب قائم مقام صدر فوادالمبزع اور وزیر اعظم محمد الغنوشی نے فرار ہوجانے والے صدر زین العابدین بن علی کی پارٹیDemocratic Constitutional Rally RCD سے علیحدگی اختیار کر لی ہے۔

بظاہر ان کا مقصد مجموعی صورتحال میں سابقہ حکومتی پارٹی کے حوالے سے پیدا شدہ تناؤ کو کم کرنا ہے۔ آر سی ڈی نے زین العابدین کو بھی پارٹی سے نکال دیا ہے۔

Tunesien Unruhen Demonstration Ben Ali Tunis Alltag

تیونس کا ایک پرجوش شہری سابق صدر کے فرار ہونے کی خوشی میں مظاہرین میں روٹی تقسیم کرتے ہوئے

چار کلیدی وزارتوں پر سابقہ حکومت کے وزراء کے تسلسل نے اپوزیشن جماعتوں کو ناراض کیا ہے۔ عام لوگ اس کابینہ کو عوامی تحریک کے ساتھ زیادتی قرار دے رہے ہیں۔ بن علی حکومت کے آخری دنوں میں وزیر داخلہ احمد فریعا تھے اور اب وہ قومی حکومت میں بھی اسی مسند پر براجمان ہیں۔ اس کے علاوہ ٹریڈ یونین، طلبہ اور عوام میں بھی غم و غصہ محسوس کیا جارہا ہے۔

قومی حکومت میں شامل اپوزیشن پارٹیوں کے ایک وزیر مصطفیٰ بن جعفر نے الغنوشی اور فواد المبزع کی بن علی کی سیاسی جماعت سے علیحدگی کو ایک احسن قدم قرار دیا ہے۔ ایک دوسری جماعت UGTT نے اپنے تین وزراء کو کابینہ میں شامل ہونے سے روک دیا ہے۔ اسی یونین کے عابد البریکی نے صاف صاف انداز میں کہا ہے کہ بن علی حکومت کے وزراء کو ہر حال میں حکومت سے فارغ کرنا ہو گا کیونکہ یہ زین العابدین بن علی کی باقیات میں سے ہیں۔

عوامی سطح پر الغنوشی حکومت میں بن علی کے وزراء کی موجودگی کو انقلاب کی توہین قرار دیا جا رہا ہے۔ ایسے خدشات ہیں کہ الغنوشی کو بھی کہیں عوامی تحریک کے سامنے اپنے منصب سے سبکدوش نہ ہونا پڑ جائے۔ نئی قومی حکومت میں شامل اپوزیشن جمات التجدید پارٹی نے بھی اپنے وزیر احمد ابراہیم کو کابینہ میں شامل ہونے کی اجازت نہیں دی ہے۔

Tunesien Oppositionspolitiker Präsidentschaftskandidat Moncef Marzouki in Tunis

اپوزیشن رہنما منصف المرزوقی اپنے حامیوں کے درمیان

اس دوران تیونس کے ایک مقبول سیاستدان منصف المرزوقی بھی پیرس سے واپس تیونس پہنچ گئے ہیں اور انہوں نے بھی الغنوشی حکومت کو سابقہ حکومت کا تسلسل قرار دیتے ہوئے انقلاب جاری رکھنے کا عندیہ دیا ہے۔

تیونس میں اپوزیشن سیاستدان مغرب کے نئے رویے پر بھی تنقید کر رہے ہیں جس میں وہ موجودہ حکومت کو انسانی حقوق کے احترام کا مشورہ دے رہے ہیں۔ ان کے مطابق عرب دنیا کے تمام سخت گیر حکمرانوں کو ماضی میں مغرب اور امریکہ کی حمایت حاصل رہی ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس