1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تہور رانا کے خلاف سماعت، وکیل استغاثہ کے دلائل مکمل

امریکی وکیل استغاثہ نے منگل کو اپنے دلائل ختم کرتے ہوئے کہا ہے کہ شگاگو کے پاکستانی نژاد تاجر تہور رانا 2008 ء میں ممبئی حملے کرنے والے دہشت گروں کے ’اندرونی دائرے‘ کا حصہ ہیں۔

default

ہيڈلی کی عدالتی پيشی، ہاتھ سے بنائی گئی تصوير

پاکستانی خفیہ ادارے آئی ایس آئی کے دہشت گرد تنظمیوں کے ساتھ مبینہ روابط اور اسامہ بن لادن کی پاکستان میں ہلاکت کے بعد تہور رانا کے اس مقدمے کو انتہائی حساس قرار دیا جا رہا ہے۔ امريکی وکلائے استغاثہ کے مطابق کينيڈين شہريت رکھنے والے 50 سالہ پاکستانی تاجر تہوّر رانا ممبئی کے حملوں ميں ملوث تھے۔ رانا ايک اميگريشن سروس کے مالک ہيں۔

امريکہ ميں پاکستانی تاجر تہوّر رانا پر یہ مقدمہ ایک ایسے وقت میں شروع ہوا ہے، جب اسامہ بن لادن کی موت کے بعد پاکستان اور امريکہ کے تعلقات بہت مشکل مرحلے ميں ہيں۔ پاکستان پر الزامات عائد کیے جا رہے ہیں کہ اُس کے حکام کو بن لادن کے ٹھکانے کا علم تھا اور وہ شدت پسندوں سے جنگ ميں اپنی ذمہ دارياں صحيح طرح سے پوری نہيں کر رہے۔

منگل کے روز وکیل استغاثہ وکٹوریہ پیٹرس نے جج کو کوڈ ای میلز اور ایف بی آئی کی طرف سے ٹیپ کردہ گفتگو کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ دہشت گردی کے دو منصوبے بنائے گئے تھے۔ ایک ممبئی حملوں کے حوالے سے تھا، جبکہ دوسرا حملہ ڈنمارک کے اخبار پر کیا جانا تھا۔ ان کے مطابق ڈیوڈ ہیڈلی ان منصوبوں کی تصدیق کر چکے ہیں۔

NO FLASH Anschläge Mumbai Indien 2008

2008ء کے حملوں میں 160 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے

ڈیود ہیڈلی تہور رانا کےملٹری اسکول کے دوست ہیں۔ ڈیوڈ ہیڈلی کو2009ء میں شکاگو ایئر پورٹ سے گرفتار کیا گیا تھا۔ اس مقدمے ميں کليدی گواہ سمجھے جانے والے ہيڈلی نے سزائے موت اور کسی دوسرے ملک کے حوالے کيے جانے سے بچنے کے ليے اقبال جرم کر ليا تھا۔

تہور رانا کے وکیل صفائی کا کہنا تھا کہ رانا کو اس کے دوست کے ارادوں کا علم نہیں تھا اور یہ کہ ان کی امیگریشن کمپنی کو ہیڈلی نے اپنے مقاصد کے لیے استعمال کیا ہے۔ رانا کے وکیل دفاع نے جج سے کہا، ’’ڈیوڈ ہیڈلی پر اعتبار نہیں کیا جا سکتا۔ وہ زندگی بھر دھوکہ بازی سے کام لیتا رہا ہے۔ ہیڈلی یہ سوچتا ہے کہ وہ ہر ایک کو الّو بنا سکتا ہے۔ آپ اس کے دھوکے سے محتاط رہیں۔‘‘

اس کے جواب میں وکیل استغاثہ کا کہنا تھا کہ ایف بی آئی کی طرف سے ٹیپ کردہ گفتگو سے پتہ چلتا ہے کہ رانا کو ہیڈلی کے ارادوں کا علم تھا۔ ریکارڈ شدہ گفتگو کے مطابق رانا ہنستے ہوئے ہیڈلی کو کہتا ہے کہ ہوٹل کا محاصرہ کرنے والوں کو سب سے بڑا انعام‘ دیا جانا چاہیے۔

ممبئی حملوں کے ا س مقدمے کا فیصلہ کب سنایا جائے گا اس حوالے سے ابھی تک کوئی تاریخ نہیں دی گئی۔

رپورٹ: امتیاز احمد

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM