1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

’تھری ڈی‘ پرنٹنگ کے ذریعے بنایا گیا پہلا ہوائی جہاز

برلن ایئر شو میں پہلی مرتبہ ’تھری ڈی‘ پرنٹر سے تیار کردہ ایک ہوائی جہاز پیش کیا گیا ہے۔ شونے فیلڈ ایئر پورٹ پر بین الاقوامی ایئر شو پہلی جون سے لے کر چار جون تک منعقد کیا گیا۔

default

تھور منی ایئر کرافٹ

جرمن دارالحکومت برلن میں منعقد کیے گئے بین الاقوامی ایئر شو میں ایک ایسا جہاز نمائش کے لیے پیش کیا گیا، جو تھری ڈی پرنٹر کا شاہ کار ہے۔ یہ ہوائی جہاز یورپی طیارہ ساز کمپنی ایئر بس نے تیار کیا ہے۔ اِس کا نام تھور ہے۔ انگریزی میں Thor سے مراد Test of High-tech Objectives in Reality ہے۔ اِس جہاز نے نمائش گاہ میں ہر شخص کی توجہ حاصل کی۔

ایئر بس کے منی ہوائی جہاز کا وزن محض 21 کلوگرام یا 45 پاؤنڈ ہے۔ یہ بغیر پائلٹ کے پرواز کرنے والا ڈرون چار میٹر یا تیرہ فیٹ لمبا ہے۔ اِس میں کوئی کھڑکی نہیں رکھی گئی ہے۔ طیارہ ساز کمپنی نے ابھی اِس کو سفید رنگ سے تیار کیا ہے۔

ماہرین کے مطابق یہ ایک ایسا ہوائی جہاز ہے جو مستقبل کی ایوی ایشن ٹیکنالوجی کی ابتدا ہے کیوں کہ ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ سے وقت کی بچت، ایندھن کا کم استعمال اور کم خرچ سے اشیاء تخلیق کی جا سکیں گی۔

تھور ہوائی جہاز کے اندرونی اجزاء، جو ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ کے حامل نہیں ہیں، وہ صرف الیکٹریکل حصے ہیں۔ ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ کے لیے پولی امائیڈ نامی کیمیکل استعمال کیا جاتا ہے۔

Deutschland Iron Maiden Ed Force One und Eurofighter Berlin

برلن ایئر شو میں ایوی ایشن ٹیکنالوجی کے کئی نئے شاہکار پیش کیے گئے

ایئر بس ادارے میں تھور منی ہوائی جہاز کے پراجیکٹ کے انچارج ڈیٹلیو کونیگورسکی کا کہنا ہے کہ برلن ایئر شو میں امکاناً پہلی مرتبہ ایک ایسے جہاز کو پیش کیا گیا ہے، جو ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ ٹیکنالوجی سے تیار کیا گیا ہے اور اگر اِس ٹیکنالوجی کو مزید ترقی دے کر اشیاء کی ساخت کا عمل آگے بڑھا تو وہ وقت زیادہ دور نہیں جب اجزاء تیار کرنے کے بجائے کسی ہوائی جہاز کا ایک مکمل نظام تیار کیا جا سکے گا۔‘‘

تھور منی ایئر کرافٹ کے چیف انجینیئر گونار ہاسے کا کہنا ہے کہ یہ چھوٹا سا ہوائی جہاز انتہائی عمدہ پرواز کا حامل ہے۔ اِس کی آزمائشی پروازوں کا سلسلہ شمالی جرمن شہر ہیمبرگ میں گزشتہ برس نومبر میں مکمل کیا گیا تھا۔ ہاسے کے مطابق پرواز کے دوران تھور اپنا توازن کمال خوبی سے برقرار رکھتا ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ ایئر بس کمنپی اور طیارہ سازی میں اِس کا حریف ادارہ بوئنگ پہلے ہی ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ ٹیکنالوجی کو استعمال کر رہا ہے۔ خاص طور پر ایئر بس A350 اور B787 ڈریم لائنر کے کچھ حصے ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ ٹیکنالوجی کی ساخت کے ہیں۔ اِس ٹیکنالوجی کے ایک ماہر ژینس ہینزلر کے مطابق ’تھری ڈی پرنٹنگ‘ سے تیار کردہ حصوں کو جوڑنے کے لیے چھوٹے آلات کی ضرورت نہیں ہوتی اور یہ جلد تیار بھی کیے جا سکتے ہیں۔ ہینزلر کے مطابق ایسے ہوائی جہاز ماضی کے ہوائی جہازوں سے تیس سے پچاس فیصد کم وزن کے حامل بھی ہوسکتے ہیں اور پیداوار کے دوران سامان قطعاً ضائع نہیں ہوتا۔

DW.COM