1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

' تھائی حکومت بائیس پاکستانی مہاجرین کو فوری طور پر رہا کرے‘

تھائی لینڈ میں انسانی حقوق کی ایک تنظیم نے تھائی حکومت سے پینتیس پاکستانی اور صومالی مہاجرین کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔ تنظیم کا کہنا ہے کہ یہ مہاجرین ایک ہفتے سے زیر حراست ہیں۔

انسانی حقوق کے لیے سرگرم ’ساؤتھ ایسٹ ایشین رائٹس گروپ فورٹی فائی رائٹس‘ نے آج بروز پیر کہا ہے کہ گرفتار مہاجرین میں چھ بچے بھی شامل ہیں جو اپنے والدین کے ہمراہ تھائی لینڈ آئے تھے۔ تیس اکتوبر کو تھائی پولیس نے خبر ملنے پر بنکاگ کے مضافات میں کچھ گھروں پر چھاپے مار کر بائیس پاکستانیوں کو گرفتار کر لیا تھا جن میں یہ چھ بچے بھی شامل تھے۔

زیر حراست پاکستانیوں میں سے پندرہ پر تھائی لینڈ کا ویزہ ختم ہونے کے بعد بھی یہاں قیام کا الزام ہے جبکہ ایک پاکستانی باشندے پر ملک میں غیر قانونی داخلے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ ان گرفتاریوں کے اگلے ہی روز بنکاک میں سلسلہ وار چھاپوں کے دوران صومالیہ کے اکیس شہریوں کو بھی گرفتار کیا گیا جن میں  آٹھ بچے بھی شامل ہیں۔

'ساؤتھ ایسٹ ایشین رائٹس گروپ‘ کا موقف ہے کہ ان میں سے بعض صومالی باشندوں کو بعد ازاں رہا کر دیا گیا لیکن کچھ ابھی تک قید ہی میں ہیں حالانکہ اُن کے پاس اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرت کی جانب سے جاری کردہ دستاویزات بھی موجود ہیں۔

Birma Flüchtlinge in Thailand (AP)

تھائی لینڈ نے سن 1951 کے کنونشن برائے مہاجرین کی تصدیق نہیں کی ہے

دوسری جانب امیگریشن پولیس کمانڈر چُوچت تھاری چت کا کہنا ہے کہ یہ بات غیر اہم ہے کہ ان مہاجرین کے پاس قانونی دستاویزات موجود تھیں۔ تھاری چت کے بقول، ’’ یہ افراد مقامی لوگوں کے لیے پریشانی کا باعث ہیں، ادھر ادھر گھومتے پھرتے ہیں اور شور مچاتے ہیں۔‘‘

یاد رہے کہ تھائی لینڈ نے سن 1951 کے کنونشن برائے مہاجرین کی تصدیق نہیں کی ہے اور نہ ہی تھائی حکومت مہاجرین اور پناہ کے طالب افراد کی حیثیت کو تسلیم کرتی ہے۔ فورٹی فائی رائٹس کی ایکزیکٹو ڈائریکٹر ایمی سمتھ کے مطابق،’’ اپنے ملکوں میں ظلم و ستم برداشت کرنے والے افراد کو تھائی لینڈ میں اسی قسم کے سلوک کا سامنا نہیں ہونا چاہیے۔‘‘

DW.COM