1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

تمام مہاجر بچے ستمبر سے اسکول جائيں گے، يونانی وزير اعظم

يونان ميں موجود ہزاروں کی تعداد ميں مہاجر بچوں کو تعليم کی فراہمی یقینی بنانے کے ليے سينکڑوں اضافی اساتذہ کی خدمات حاصل کی جائيں گی۔

يونانی وزير اعظم اليکسس سپراس نے اعلان کيا ہے کہ ستمبر سن 2016 سے اسکول جانے کی عمر والے ان کے ملک ميں موجود تمام مہاجر بچے باقاعدہ تعليم شروع کر ديں گے۔ اس مقصد کے ليے سينکڑوں اضافی اساتذہ کی خدمات حاصل کرنے کا فيصلہ کيا گيا ہے۔ سپراس نے ستائيس جولائی کے روز ٹيلی وژن پر نشر کردہ اپنے ايک خطاب ميں يہ اعلان کيا۔ تاحال يہ واضح نہيں کہ کتنے بچے اسکول ميں باقاعدہ تعليم حاصل کرنے کے ليے اندراج کرائيں گے۔

مختلف يورپی ممالک کی جانب سے اٹھائے جانے والے سخت اقدامات اور سرحدوں کی بندش کے نتيجے ميں اس وقت ستاون ہزار سے زائد مہاجرين يونان ميں پھنسے ہوئے ہيں۔ کئی اندازوں کے مطابق ان ميں سے ايک تہائی تعداد بچوں کی ہے۔ ملکی وزير تعليم نيکوس فيليس کے ساتھ ايک حاليہ ملاقات کے بعد دارالحکومت ايتھنز کے ميئر يوورگوس کامينيس نے ايسے اسکول جانے کے اہل مہاجر بچوں کی تعداد قريب بائيس ہزار بتائی۔

يونانی وزير اعظم نے بتايا ہے کہ اضافی ضروريات پوری کرنے کے ليے کم از کم آٹھ سو مزيد اساتذہ کو ملازمت فراہم کی جائے گی

يونانی وزير اعظم نے بتايا ہے کہ اضافی ضروريات پوری کرنے کے ليے کم از کم آٹھ سو مزيد اساتذہ کو ملازمت فراہم کی جائے گی

يونانی وزير اعظم نے بتايا ہے کہ اضافی ضروريات پوری کرنے کے ليے کم از کم آٹھ سو مزيد اساتذہ کو ملازمت فراہم کی جائے گی۔ وزير تعليم فيليس کے بقول متعلقہ محکمے اور حکام اضافی بچوں کا بوجھ اٹھانے کے ليے تيار ہيں۔ انہوں نے مزيد بتايا کہ طلباء کو يونانی زبان کے علاوہ ايک اور زبان بھی سکھائی جائے گی جبکہ ايک اور سرکاری اہلکار نے يہ بتايا کہ بچوں کو حساب کی تعليم بھی دی جائے گی۔ وزير تعليم نےمزيد کہا کہ ابتداء ميں بچوں کو انضمام مکمل ہونے تک مختلف کلاسوں ميں پڑھايا جائے گا اور پھر آہستہ آہستہ انہيں ديگر يونانی بچوں کے ہمراہ ايک ہی جماعت ميں تعليم فراہم کی جائے گی۔ دريں اثنا يہ فيصلہ بھی کيا گيا ہے کہ جو بچے شہروں سے دور مہاجر کيمپوں ميں گزر بسر کر رہے ہيں، انہيں وہيں تعليم دی جائے گی۔

غير سرکاری تنظيم ’سيو دا چلڈرن‘ کے مطابق يونان ميں مہاجر کيمپوں ميں پھنسے بچوں نے اوسطاً ايک سے ڈيڑہ سال سے باقاعدہ اسکول ميں تعليم حاصل نہيں کی ہے۔ اس کے علاوہ اسکول جانے کی عمر والے تقريباً بيس فيصد بچوں نے سرے سے اسکول ميں قدم تک نہيں رکھا۔

ملتے جلتے مندرجات