1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تعز پر قبضے کے لیے گھمسان کی لڑائی، بیسیوں ہلاکتیں

مغربی یمنی شہر تعز پر قبضے کے لیے حکومت کی حامی فورسز اور ایران نواز شیعہ حوثی باغیوں کے درمیان شدید لڑائی جاری ہے۔ اطلاعات کے مطابق اس لڑائی میں اب تک درجنوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کا کہنا ہے کہ گزشتہ دو روز سے حوثی باغیوں نے اس شہر کا محاصرہ کر رکھا ہے اور انہیں حکومت کی حامی فورسز کی جانب سے شدید مزاحمت کا سامنا ہے۔ ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق دو روز سے جاری اس شدید لڑائی میں اب تک کم از کم 71 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ یمنی حکام نے جمعے کے روز بتایا کہ ہلاک شدگان میں گیارہ عام شہری بھی شامل ہیں۔

باغیوں کے خلاف سعودی قیادت میں اتحادی فورسز کی فضائی کارروائیوں میں مزید 100 افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات بھی ہیں۔ بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی کا کہنا ہے کہ یوں تو یمن بھر میں عام شہریوں کی زندگی شدید مشکلات کا شکار ہے، تاہم تعز شہر میں موجود عام شہری غیرمعمولی حد تک خوراک اور ادویات کی قلت سے دوچار ہیں۔

Jemen Angriff von Huthi Rebellen auf Taiz

تعز شہر میں گزشتہ دو روز میں متعدد عام شہری مارے گئے ہیں

یہ بات اہم ہے کہ حوثی باغی یمن کے وسطی اور شمالی علاقوں پر قابض ہیں اور ملک کا جنوبی شہر عدن صدر منصور ہادی کی حامی فورسز کا گڑھ ہے۔ منصور ہادی گزشتہ برس صنعاء پر حوثی باغیوں کے قبضے کے بعد کافی عرصے تک نظربند رہے تھے، تاہم بعد میں فرار ہو کر عدن جا پہنچے تھے۔ عدن شہر پر حوثی باغیوں کے حملے کے بعد انہیں جلاوطن ہو کر سعودی عرب جانا پڑ گیا تھا، تاہم وہ اور ان کی حکومت کے زیادہ تر عہدیدار اب دوبارہ عدن واپس آ چکے ہیں۔

رواں برس مارچ میں سعودی قیادت میں اتحادی فورسز نے حوثی باغیوں کے خلاف فضائی کارروائیوں کا آغاز کیا تھا اور اسی فضائی مدد سے حکومت نواز فورسز عدن سمیت متعدد شہروں سے حوثی باغیوں کو پسپا کرنے میں کامیاب ہو چکی ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق مارچ کے آخر سے جاری اتحادی فضائی کارروائیوں میں اب تک یمن میں 2577 عام شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔