1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ترک صدر ايردوآن کو يورپی سمٹ ميں شرکت کی دعوت

مالٹا ميں يورپی يونين کے ايک ہنگامی اجلاس ميں يورپی رہنماؤں نے فيصلہ کيا ہے کہ ترکی کے راستے پناہ گزينوں کی آمد کو روکنے کے حوالے سے بات چيت کے ليے ترک صدر رجب طيب ايردوآن کو ايک سمٹ ميں شرکت کی دعوت دی جائے گی۔

يورپی کونسل کے صدر ڈونلڈ ٹُسک نے تنبيہ کی ہے کہ پاسپورٹ کے بغير سفر کرنے والے شينگن زون کو بچانے کے ليے يونان کے راستے مہاجرين کی آمد کی رفتار کو کم کرنے کے حوالے سے وقت کی شديد کمی کا سامنا ہے۔ ٹُسک نے يہ بات مالٹا کے دارالحکومت ویليٹا ميں يورپی يونين اور افريقی ممالک کی سمٹ کے بعد منعقدہ يورپی يونين کے ايک ہنگامی اجلاس ميں کہی۔

اگرچہ يورپ ميں اس حوالے سے مخالف بھی پائی جاتی ہے کہ ترکی ميں انسانی حقوق کی مبينہ خلاف ورزيوں کے تناظر ميں صدر رجب طيب ايردوآن کو زيادہ کچھ نہ ديا جائے تاہم حاليہ انتخابات ميں ان کی جماعت کی واضح کاميابی کے سبب مغربی رہنماؤں کے سامنے مطالبات رکھنے کے حوالے سے ايردوآن کی پوزيشن مستحکم ہو گئی ہے۔

اجلاس ميں شرکاء کو انقرہ حکومت کے ساتھ اس حوالے سے جاری مذاکراتی عمل کی پيش رفت سے آگاہ کيا گيا اور انہيں حتمی شکل دينے کی منظوری بھی دے دی گئی۔ نيوز ايجنسی روئٹرز کے مطابق اٹھائيس رکنی يورپی يونين کے رکن ممالک اور ترک رہنما کے مابين اسی ماہ کے اواخر یا دسبمر کے اوائل ميں برسلز ميں ہونے والی سمٹ ميں ان اقدامات کو حتمی شکل دی جا سکتی ہے۔

يورپی يونين اور افريقی رياستوں کی سمٹ بھی مہاجرين کے بحران کے موضوع پر ہی ہوئی

يورپی يونين اور افريقی رياستوں کی سمٹ بھی مہاجرين کے بحران کے موضوع پر ہی ہوئی

اطلاعات کے مطابق يورپی يونين کی طرف سے انقرہ حکومت کو آئندہ دو برس کے ليے تين بلين يورو کی مالی امداد کے علاوہ ترکی کی يورپی يونين ميں شموليت کے حوالے سے مذاکراتی عمل کی بحالی اور ترکی کے شہريوں کے ليے بغير ويزے يورپ ميں سفر جيسی سہولت مہیا کرنے کی پيشکش کی جائے گی۔ اس کے بدلے يورپی بلاک چاہتا ہے کہ انقرہ حکومت ترکی ميں موجود شامی پناہ گزينوں کے حالات ميں بہتری لائے اور ايشيائی ممالک سے يورپ پہنچنے والے تارکين وطن کو روکنے کے ليے اقدامات کرے۔

جرمن چانسلر انگيلا ميرکل نے کہا کہ يورپی يونين اور ترکی کے مابين ہونے والی يہ سمٹ اس بات کی عکاس ہو گی کہ فريقين ايک دوسرے کے ساتھ کام کرتے ہوئے شامی خانہ جنگی کے سبب پیدا ہونے والے چيلنجز سے ذمہ دارانہ انداز ميں نمٹيں گے۔ يونانی وزير اعظم اليکسس سپراس کے بقول يہ واضح ہے کہ مہاجرين کی آمد کے سلسلے کو روکنے کے ليے ترکی کليدی اہميت کا حامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے انقرہ حکومت کے ساتھ سمجھوتہ نا گزير ہے۔