1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ترک اراکینِ پارلیمنٹ کا استثنیٰ ختم کرنے کی قانون سازی

ترکی میں حکمران پارٹی کو امید ہے کہ ترک اراکینِ پارلیمان کو حاصل استثنیٰ کے خلاف قانون سازی کا عمل جلد مکمل ہو جائے گا۔ اس کا بھی امکان ہے کہ اِس قانون سازی کو ترکی کی اعلیٰ دستوری عدالت میں چیلنج کیا جا سکے گا۔

ترک دستور میں ترمیم کا بنیادی مقصد کرد اراکینِ پارلیمنٹ کو پوری طرح کنٹرول کرنا خیال کیا جاتا ہے۔ ترک فوج کے جنوب مشرقی علاقے میں جاری آپریشن پر کرد نواز سیاسی پارٹی پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (HDP) نے تنقید کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے۔ اسی تناظر میں صدر رجب طیب ایردوآن کی سیاسی جماعت جسٹس اینڈ دیویلپمنٹ پارٹی (AKP) ملکی دستور میں ترمیم کرنا چاہتی ہے تا کہ کردوں کے حامی اراکین پارلیمنٹ کو پولیس کارروائی کا سامنا ہو سکے۔ دوسری جانب مبصرین کا خیال ہے کہ نئی ترامیم سے ایردوآن صرف اراکین پارلیمنٹ کا استثنیٰ ختم نہیں کرنا چاہتے بلکہ وہ صدارتی اختیارات میں اضافہ چاہتے ہیں۔

پارلمینٹ کی دستور میں ترمیم کرنے والی خصوصی کمیٹی نے دستور میں اراکینِ پارلیمنٹ کے استثنیٰ کو ختم کرنے کی سفارش کر دی ہے۔ اِس کمیٹی کے اجلاس میں شریک کرد نواز پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے اراکین نے اجلاس سے واک آؤٹ بھی کیا تھا مگر حکمران پارٹی نے اپنی کارروائی مکمل کر کے دستوری ترمیم کے حق میں فیصلہ دیا۔ اِس ترامیمی قرارداد کی منظوری کے لیے رجب طیب ایردوآن کی سیاسی جماعت کو 367 ووٹ کی ضرورت ہے۔ حکمران پارٹی کی نشستوں کی تعداد 316 ہے اور امکاناً اُسے انتہائی دائیں بازو کی نیشنلسٹ موومنٹ پارٹی اور اپوزیشن جماعت ری پبلکن پیپلز پارٹی کی حمایت حاصل ہو سکتی ہے۔

Türkei Ahmet Davutoglu und Tayyip Erdogan

ترکی کے سبکدوش ہونے والے وزیراعظم داؤد اولُو اپنے صدر رجب طیب ایردوآن کے ساتھ مشورہ کرتے ہوئے

بعض ترک سیاسی حلقوں کے مطابق حکمران سیاسی پارٹی کو تمام حلقوں کی حمایت حاصل ہونا مشکل دکھائی دیتا ہے اور اِس پارٹی کے بعض اراکین بھی اِس دستوری ترمیم کے خلاف ووٹ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ ترک صدر ایردوآن کی جانب سے وزیراعظم کے اختیار کم کر کے ملک میں حکومتی اختیارات صدر کو منتقل کرنے کی دستوری کوششوں کو سیاسی حلقے اُن کے آمرانہ رویے کا مظہر خیال کرتے ہیں۔ اراکین پارلیمنٹ کے استثنیٰ کو ختم کرنے کا اشارہ بھی سب سے پہلے ایردون نے ہی دیا تھا۔

جسٹس اینڈ ڈیویلپمنٹ پارٹی کے اراکین کو بھی خطرہ ہے کہ اگر ترمیم ہو جاتی ہے تو وہ بھی پولیس کارروائی کا نشانہ بن سکتے ہیں کیونکہ وہ بھی بعض حکومتی اقدامات کو گاہے بگاہے تنقید کا نشانہ بناتے رہتے ہیں۔ ترکی کی استنبول کی سٹی یونیورسٹی (Şehir University) کے دستوری قانون کے ماہر پروفیسر ایرگون اوزبُودُون کا کہنا ہے کہ وہ خیال کرتے ہیں کہ حکمران پارٹی کی متعارف کرائی گئی ترامیم دستور کے خلاف ہیں اور یہ مساوات کے بنیادی اصول کے بھی منافی ہیں۔ اوزبُودُون کے مطابق اضافی شقوں کی شمولیت سے دستور کی روح متاثر ہوتی ہے اور اِس عمل سے ایک خاص طریقے سے دستور کو معطل کرنا ہوتا ہے۔