1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ترکی مہاجرین معاہدے کی پاسداری کر رہا ہے، یونان

یونانی حکام نے یورپ کی طرف مہاجرت کرنے والے افراد کی تعداد میں کمی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ترکی ، یورپی یونین کے ساتھ ہونے والی مہاجرین ڈیل کی پاسداری کر رہا ہے۔

Griechenland Flüchtlingslager Moria auf Lesbos (Getty Images/AFP/L. Gouliamaki)

یورپی یونین ترکی میں مہاجرین کو سہولیات مہیا کرنے کے لیے انقرہ حکومت کو مالی معاونت بھی فراہم کر رہی ہے

یونان میں مہاجرین کے بحران پر کام کرنے والی مینیجمنٹ باڈی کے مطابق رواں ماہ کے آغاز سے اب تک  ترکی سے براستہ بحیرہ ایجین اوسطاﹰ 36 تارکین وطن یونانی جزائر تک پنہچے ہیں۔

کرائسس مینیجمنٹ ٹیم کا یہ بھی کہنا ہے کہ سال کے آغاز سے اب تک سمندر کے ذریعے یونان آنے کی کوشش میں 53 مہاجرین ڈوب کر ہلاک  ہوئے۔

 اس سلسلے میں تازہ ترین واقعہ پیر کے روز پیش آیا جب لیسبوس جزیرے سے دور یونانی پانیوں میں 16 افراد کشتی ڈوبنے سے ہلاک ہو گئے تھے جبکہ آٹھ افراد اب تک لاپتہ ہیں۔

 تاہم مہاجرین کے بین الاقوامی ادارہ برائے مہاجرت کے اعداد و شمار کی رو سے گزشتہ برس یکم جنوری سے 26 اپریل کے دوران بحیرہ ایجین میں ڈوب کر ہلاک ہونے والے 376 تارکین وطن کے مقابلے میں رواں برس اسی عرصے میں ہلاکتوں کی تعداد میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

Griechenland Flüchtlinge auf Lesbos (Getty Images/AFP)

معاہدے کے مطابق ترک ساحلوں سے غیر قانونی طور پر یونانی جزیرے کا رخ کرنے والے تمام مہاجرین کو واپس ترکی بھیجا جا رہا ہے

 اپریل سن 2016 سے یورپ پہنچنے والے تارکین وطن کی تعداد تیزی سے کم ہوئی ہے۔ اس کی بڑی وجوہات میں بلقان روٹ پر واقع ٹرانزٹ یورپی ممالک کا اپنی سرحدیں بند کرنا اور ترکی کا تارکین وطن کے حوالے سے یورپی یونین کے ساتھ ہونے والا معاہدہ شامل ہیں۔

مہاجرین سے متعلق جرمنی اور یورپی یونین کے مابین طے پانے والے معاہدے کے مطابق ترک ساحلوں سے غیر قانونی طور پر یونانی جزیرے کا رخ کرنے والے تمام مہاجرین کو واپس ترکی بھیجا جا رہا ہے۔ اب تک قریب بارہ سو ایسے تارکین وطن کو واپس ترکی بھیجا جا چکا ہے، جن میں سے اکثریت پاکستانی شہریوں کی تھی۔

اس معاہدے کے مطابق واپس ترکی بھیجے جانے والے ہر بین الاقوامی قوانین کے مطابق تسلیم شدہ مہاجر کے بدلے ترک کیمپوں میں رہنے والے ایک مہاجر کو یورپی یونین میں قانونی طریقے سے پناہ دی جائے گی۔ علاوہ ازیں یورپی یونین ترکی میں مہاجرین کو سہولیات مہیا کرنے کے لیے انقرہ حکومت کو مالی معاونت بھی فراہم کر رہی ہے۔

DW.COM