1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ترکی سے یونان پہنچنے کی کوشش، 70 مہاجرین ریسکیو

جمعرات کے روز ترکی سے بحیرہء ایجیئن کے راستے یونان پہنچنے کے کوشش کے دوران 70 مہاجرین کو ریسکیو کیا گیا ہے۔ ترکی میں بغاوت کی ناکام کوشش کے بعد مہاجرین کا یہ سب سے بڑا ریلا تھا۔

یونانی حکام کے مطابق ترکی میں گزشتہ ماہ فوجی بغاوت کی ناکام کوشش کے دوران یا بعد مہاجرین کا اتنے بڑا ریلا یونان کی جانب نہیں بڑھا تھا۔ یونانی حکام کا کہنا ہے کہ جمعرات کے روز بحیرہء ایجیئن میں سمندری لہروں سے لڑنے کی کوشش میں سرگرداں 70 تارکین وطن کو لیسبوس جزیرے کے قریب سے ریسکیو کیا گیا ہے۔

ایک برس پہلے اس راستے سے یورپی یونین میں داخل ہونے والے مہاجرین کی تعداد یومیہ بنیادوں پر ہزاروں میں تھی، تاہم یورپی یونین اور ترکی کے درمیان رواں برس مارچ میں طے پانے والے معاہدے کے بعد مہاجرین کے اس سیلاب میں خاصی کمی دیکھی گئی ہے۔ مشرقِ وسطیٰ اور افریقہ میں خانہ جنگیوں اور غربت سے تنگ آ کر یورپ کا رخ کرنے والے افراد اس معاہدے کے بعد اب اس راستے کو کم استعمال کر پا رہے ہیں۔

یونانی حکام نے بتایا کہ لیسبوس جزیرے کے قریب ایک خستہ حال کشتی سے 67 افراد کو بچایا گیا، جب کہ دیگر تین پانی سے نکالے گئے۔

یونانی کوسٹ گارڈز کے ایک اہلکار کے مطابق، ’’اس کشتی پر یہ 70 افراد سوار تھے اور یہ کشتی سمندری پانی کی نذر ہونے والی تھی۔‘‘

بدھ کے روز بھی یونانی حکام نے 38 افراد کو ریسکیو کیا تھا۔

Türkei Griechenland Abschiebung von Flüchtlingen

یونان میں اب بھی ہزاروں مہاجرین موجود ہیں

یونانی وزیر برائے مہاجرت یِانِس موزالاس نے بدھ کے روز اپنے ایک بیان میں کہا کہ ترکی اور یورپی یونین کے درمیان ڈیل پر عمل درآمد ہو رہا ہے، تاہم یونانی حکومت ترکی میں سیاسی تبدیلیوں کو غور سے دیکھ رہی ہے۔

ایک یونانی ٹی وی سے بات چیت کے دوران جب موزالاس سے یہ پوچھا گیا کہ اگر یورپی یونین اور ترکی کے درمیان یہ ڈیل ختم ہو گئی تو؟ موزالاس کا کہنا تھا، ’’اگر ہم یہ دیکھیں کہ یہ بہاؤ پر شروع ہو رہا ہے، تو یقین کیجیے یہ ہمارا امتحان ہو گا۔ کوئی بھی ملک اتنے زیادہ انسانوں کے لیے بندوبست نہیں کر سکتا۔‘‘

یہ بات اہم ہے کہ انقرہ حکومت واضح الفاظ میں کہہ چکی ہے کہ اگر اس معاہدے کے تحت ترک باشندوں کو شینگن ممالک میں بغیر ویزا انٹری نہ دی گئی، تو ترکی یہ معاہدہ ختم کر دے گا۔