1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’ترکی آمریت کی راہ پر گامزن نہیں‘

ترک وزیر اعظم بن علی یلدرم نے ایسے الزامات کی سختی سے تردید کی ہے کہ ترکی میں صدارتی نظام نافذ کرنے سے ملک میں مطلق العنانیت اور آمریت کو فروغ ملے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ کئی دوسرے جمہوری ممالک میں بھی صدارتی نظام ہے۔

یلدرم مغربی جرمنی کے قصبے اوبرن ہاؤسن میں ترک شہریوں کے ایک بڑے اجتماع سے خطاب کر رہے تھے۔ ترکی کے بعد ترکوں کی سب سے بڑی تعداد جرمنی میں ہے جہاں چودہ لاکھ سے زائد ترک شہری کئی دہائیوں سے آباد ہیں۔

ترک سیاسی نظام میں سلطنت عثمانیہ کے بعد کی سب سے بڑی تبدیلی

اپنے حامیوں سے خطاب کرتے ہوئے ترک وزیر اعظم نے کہا، ’’لوگ کہتے ہیں ایک فرد پر مبنی نظام لایا جا رہا ہے۔ کیا جرمنی میں دو چانسلر ہیں؟ صدارتی طریقہ کار میں ظاہر ہے ایک ہی صدر ہوتا ہے۔ ایک جہاز کے دو ملاح نہیں ہو سکتے۔‘‘

ترک صدر ایردوآن آئینی اصلاحات کر کے ملک میں پارلیمانی نظام ختم صدارتی نظام قائم کرنا چاہتے ہیں۔ ترک حکام نے اس ضمن میں 16 اپریل کو ایک عوامی ریفرنڈم کرانے کا اعلان کر رکھا ہے۔ ان اصلاحات کے بعد صدر ایردوآن کی سیاسی طاقت میں مزید اضافہ ہو جائے گا۔ ترکی میں ناکام فوجی بغاوت کے بعد ایردوآن نے ایمرجنسی نافذ کر دی تھی اور بعد ازاں سیاسی حریفوں کی بڑے پیمانے گرفتاریوں کا سلسلہ شروع کر دیا تھا۔

ناقدین کا کہنا ہے کہ سیاسی نظام کے بعد ترک صدر پارلیمان کے سامنے جواب دہ نہیں رہیں گے اور صدر کا عہدہ لامحدود اختیارات کا حامل ہو گا جس کے باعث ملک میں عدلیہ کی خود مختاری بھی خطرے میں پڑ جائے گی۔ تاہم حکومت کا کہنا ہے کہ ان اقدامات کے باعث ملک میں استحکام پیدا ہو گا۔

ریفرنڈم کے دوران عوامی حمایت حاصل کرنے کے لیے جاری مہم کے دوران ’جو ترکی سے محبت رکھتے ہیں ریفرنڈم میں ہاں کے حق میں ووٹ ڈالیں‘ کا نعرہ استعمال کیا جا رہا ہے جس پر جرمنی میں تنقید کی جا رہی ہے۔ جرمنی میں سماجی انضمام کی نگران خاتون کمشنر آئیدان اُوزوس بھی تُرک نژاد ہیں۔ اُوزوس کا کہنا تھا کہ ترکی میں مجوزہ آئینی اصلاحات ’’ملکی ترقی اور ملک میں قانون کی بالادستی کے حق میں نہیں ہیں۔‘‘

ایردوآن کی جسٹس اینڈ ڈیویلپمنٹ پارٹی کے مطابق جرمنی میں منعقد ہونے والے جلسے میں دس ہزار سے زائد ترکوں نے شرکت کی۔ جرمن پولیس کے مطابق ترک وزیراعظم کے خطاب کی مخالفت میں بھی مظاہرہ کیا گیا جس میں تین سو سے زائد افراد شریک ہوئے۔

ویڈیو دیکھیے 01:50

کروڑ پتی کاروباری سے مہاجر بننے تک، ایک ترک شہری کی کہانی

Audios and videos on the topic

ملتے جلتے مندرجات