1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ترکی آرمینیا مفاہمت

ترکی اور آرمینیا نے گزشتہ روز سوئٹزر لینڈ کے شہر زیورخ میں ایک اعلیٰ سطحی تقریب میں باہمی سفارتی تعلقات کی بحالی کے لئےانتہائی اہم نوعیت کے ایک معاہدے پر دستخط کر دئے۔

default

ترکی آرمینیا کے درمیان معاہدہ ہونے والی زیورخ میں تقریب میں شریک وزرائے خارجہ

سفارت کاروں کا خیال ہے کہ اِس تاریخی معاہدے سے دونوں ملکوں کے درمیان مصالحتی عمل کو فروغ ملے گا اور ایک صدی پر پھیلی کشیدگی اور بدگمانی کی فضا کا خاتمہ ممکن ہو سکے گا۔ معاہدے پر ترک وزیر خارجہ احمد داؤد اوگلو اور آرمینیا کے وزیر خارجہ ایڈورڈ نالبندیان نے دستخط کئے۔ ہفتے کے روز ہونے والی تقریب کی ابتدا بھی ثالثی کا فریضہ سرانجام دینے والے ملک سوئٹزر لینڈ کی وزیر خارجہ مِش لِین کالمی رے نےکی۔

Vertragsunterzeichnung Türkei und Armenien

ترک وزیر خارجہ میزبان سوئٹزر لینڈ کی وزیر خارجہ کے ساتھ

معاہدے پر دستخط سے قبل آرمینیا کے اعتراضات کے بعد خطرہ پیدا ہو گیا تھا کہ شاید یہ معاہدہ طے نہ پا سکے لیکن آخری لمحات میں امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کی کاوشوں سے پیدا شدہ رکاوٹ دور ہو گئی۔ آرمینیا کو تقریب میں ترک وفد کی جانب سے کی جانے والی تقریر پر اعتراض تھا۔

امکاناً آرمینیائی وفد کے ذہن میں پیچھے ملک میں معاہدے کے حوالے سے مظاہروں کی شدت بھی موجود تھی۔دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگی اور منافرت کی وجہ پہلی عالمی جنگ کے دوران ترکی میں آباد آرمینیائی باشندوں کا قتل عام بتائی جاتی ہے۔ آرمینیا کو یقین ہے کہ اِس قتلِ عام میں اُس وقت کی سلطنتِ عثمانیہ کے وزراء مکمل طور پر ملوث تھے۔ آرمینیا کا یہ پرانا مطالبہ ہے کہ ترکی پہلی عالمی جنگ کے دوران آرمینیائی باشندوں کے قتل عام کا اعتراف کرے جبکہ اب تک ترکی کی حکومتوں، اشرافیہ اور محققین کا موقف یہ رہا ہے کہ وہ جنگ کا زمانہ تھا، جس کے دوران آرمینیائی ہی نہیں، خود ترک باشندے بھی ہلاک ہوئے۔ آرمینیا کی اپوزیشن جماعتوں نے بھی اِس معاہدے کو اپنے ملک کی سلامتی کے لئے خطرہ قرار دیا ہے۔

Vertragsunterzeichnung Türkei und Armenien

امریکی اور سوئٹزر لینڈ کی خواتین وزرائے خارجہ

اِس سمجھوتے کو عالمی سطح پر انتہائی اہمیت دی گئی تھی اور اسی باعث امریکی وزیر خارجہ کے ساتھ ساتھ روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف بھی زیورخ میں موجود تھے۔ یورپی یونین کے خارجہ امور کے چیف خاویئر سولانہ کی نمائندگی سلووانیہ کے وزیر خارجہ کر رہے تھے۔ معاہدے پر دستخط ہونے پر یورپی یونین کے خیر مقدمی بیان میں کہا گیا کہ اب دونوں ملکوں کے درمیان تناؤ اور کشیدگی کی فضا میں کمی پیدا ہونے کی امید کی جا سکتی ہے۔

سوئٹزرلینڈ کی ایک سالہ مسلسل مشاورت اور ثالثی کے باعث دونوں ملک اِس بات پر راضی ہوئے کہ وہ ایک دوسرے کے دارالحکومتوں یعنی انقرہ اوریریوان میں سفارت خانے قائم کرنے کے ساتھ ساتھ سرحدیں بھی کھولیں تاکہ عوامی آمدورفت سے حکومتوں کے درمیان بھی بہتر تعلقات استوار ہوسکیں۔ ابھی دونوں ملکوں کے پارلیمانی اداروں کی طرف سے اِس معاہدے کی توثیق باقی ہے۔ اس کے بعد ہی یہ معاہدہ نافذ العمل ہو سکے گا۔ اِس کے علاوہ سن اُنیس سو پندرہ میں پہلی عالمی جنگ کے دوران آرمینیائی باشندوں کے قتلِ عام کی تحقیق کے لئے دونوں ملکوں کے تاریخ دانوں پر مشتمل کمیشن بھی قائم کیا جائے گا۔ آرمینیا کا خیال ہے کہ پہلی عالمی جنگ کے بعد پندرہ لاکھ آرمینیائی باشندوں کا قتلِ عام ہوا تھا جبکہ ترکی اتنی بڑی تعداد کو غلط قرار دیتا ہے۔ ترک محققین کے خیال میں ہلاک ہونے والے آرمینیائی باشندوں کے تعداد دو لاکھ کے قریب ہے۔

ہفتہ کو زیورخ میں دستخط کے بعد ترکی اور آرمینیا کے درمیان ورلڈ کپ کوالیفائنگ مرحلے کے میچ کا دوسرا مرحلہ بھی شیڈیول ہے۔ اِس میچ کو بھی سفارتی تعلقات کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔ ترکی کے صدر عبداُللہ گُل نے آرمینیا کے صدر Serzh Sarkisian کو میچ دیکھنے کے لئے مدعو کر رکھا ہے۔ یہ میچ آئندہ بدھ کو کھیلا جائے گا۔ اس سے قبل ترکی کی فٹ بال ٹیم جب اپنا میچ کھیلنے یریوان گئی تھی تو ترک صدر وہ میچ دیکھنے آرمینیا گئے تھے۔

Armenischer Protest gegen Vertrag über Wiederaufnahme der diplomatischen Beziehungen

آرمینیا کے دارالحکومت یراوان میں معاہدے کے خلاف مظاہرے کے شرکاء

ماہرین کا خیال ہے کہ اِس معاہدے سے یورپی یونین میں ترکی کی شمولیت کی خواہش کو تقویت ملنے کے ساتھ قفقاذ کے خطے میں اُس کے اثر و رسوخ میں بھی اضافے کا امکان ہے۔ اِن کا مزید کہنا ہے کہ معاہدے سے جہاں ترکی اور آرمینیا کے درمیان مصالحتی عمل کا آغاز ہو گا، وہیں عالمی سطح پر اُن کے وقار میں بھی اضافہ ہو سکتا ہے۔

آرمینیا کو ترکی کے علاوہ آذربائیجان کے ساتھ بھی نگورنو کاراباخ کے علاقے پر تنازعے کا سامنا ہے۔ امکان ظاہر کیا جاتا ہے کہ ترکی کے ساتھ سفارتی روابط کی بحالی کے بعد اِس تنازعے کو بھی مکمل طور پر حل کیا جا سکے گا۔ ترکی نے نگورنو کاراباخ کے تنازعے پر سن 1993ء میں آرمینیا کے ساتھ ملنے والی اپنی سرحد بند کرنے کا اعلان کیا تھا۔ تبھی سے سفارتی تعلُقات بھی منقطع چلے آ رہے ہیں۔ آذربائیجان کے ترکی کے ساتھ گہرے سماجی، ثقافتی، لسانی اور نسلی روابط ہیں۔