1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ترشنا اور کرشنا :طبی معجزے نے قسمت بدل دی

پانچ ہفتے قبل آسٹریلیا کے ڈاکٹروں نے 32 گھنٹے کی طویل اور مشکل سرجری کے بعد بنگلہ دیش کی دو جڑواں بہنوں ترشنا اور کرشنا کے جُڑے ہوئے سروں کو ایک دوسرے سے الگ کیا تھا۔

default

کرشنا اور ترشنا کے سر پیدائشی طور پر جوڑے ہوئے تھے

اس کامیاب آپریشن کے بعد پیر کے دن ان دونوں بچیوں کو ہسپتال سے گھر جانے کی اجازت دے دی گئی۔ دونوں بچیاں جسمانی اور دماغی طور پر تیزی سے صحت یاب ہورہی ہیں۔ میلبورن رائل چلڈرن ہسپتال کی نیوروسرجن Wirginia Maixner کا کہنا ہے کہ ان کو انتہائی خوشی ہے کہ یہ دونوں بہنیں اتنی تیزی سے صحت یاب ہو رہی ہیں اور یہ کہ وہ ان دونوں بہنوں کی لمبی عمر کے لئے دعا گو ہیں۔

Siamesische Zwillinge getrennt

کرشنا آسٹریلیا میں اپنی سرپرست کے ہمراہ


اس سے پہلے ڈاکٹروں نے کہا تھا کہ اس انتہائی پیچیدہ آپریشن کے دوران دونوں بہنوں میں سے کسی ایک کے دماغ کو نقصان پہنچنے کا 75 فیصد تک امکان ہے۔

ان بچیوں کی کفالت و تربیت میں مشکلات کی وجہ سے ان کے والدین نے دونوں بچیوں کو ڈھاکہ کے ایک دارالامان میں جمع کرا دیا تھا، جہاں سے ایک فلاحی تنظیم چلڈرن فرسٹ فاؤنڈیشن ان بچیوں کو آپریشن کے لیے بنگہ دیش سے آسٹریلیا لے آئی تھی۔ آسٹریلیا میں ان بچیوں کی سرپرست Moira Kelly کا کہنا ہے کہ وہ رائل چلڈرن ہسپتال کا شکریہ ادا کرتی ہیں جن کی بدولت ان بچیوں کو نئی زندگی ملی۔ یہ بچیاں آپریشن کے بعد ہسپتال سے باہر اپنی پہلی رات "چلڈرن فرسٹ فاؤنڈیشن" میں گزاریں گی۔ ان بچیوں کے دماغ پیدائشی طور پر آپس میں جڑے ہوئے تھے اور ان کا آپریشن کرنے والی ماہر ڈاکٹروں کی ٹیم سولہ ارکان پر مشتمل تھی۔

رپورٹ: امتیاز احمد

ادارت: مقبول ملک