1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تحریک انصاف اور پیپلز کے رہنما پاڑا چنار کیوں نہیں گئے؟

پاڑا چنار میں 23 جون کو ہونے والے دہشت گردانہ حملے میں 100 کے قریب افراد کی ہلاکت کے بعد وہاں متاثرین نے دھرنا دے رکھا ہے۔ پاڑا چنار کے رہائشی حکومت، سیاسی جماعتوں، میڈیا اور فوج سے نالاں ہیں۔

افغان سرحد کے قریب پاکستان کے شمال مغربی قبائلی علاقے کُرم ایجنسی کے اہم ترین شہر پاڑا چنار میں 23 جون کو دو بم دھماکوں کے نتیجے میں 100 کے قریب افراد مارے گئے تھے۔ متاثرین کا شکوہ ہے کہ حکومت، فوج اور میڈیا کے علاوہ سیاسی جماعتوں نے اس حملے اور ان کے ساتھ ہونے والے سلوک کو کوئی اہمیت نہیں دی۔

حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نون کے مختلف عہدیدراوں سے تو کوشش کے باجود ڈی ڈبلیو کا رابطہ نہ ہو سکا مگر دو اہم اپوزیشن جماعتوں پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اب تک پاڑا چنار کیوں نہیں گئے؟ اس سوال کے ساتھ ڈی ڈبلیو نے پی ٹی آئی اور پاکستان پیپلز پارٹی کے سرکردہ رہنماؤں سے بات چیت کی۔
پی ٹی آئی سندھ کے صدر اور رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عارف علوی کا تھا کہ ان کی جماعت کے سربراہ عمران خان تو پاڑا چنار جانا چاہتے ہیں مگر ملکی فوج نے سکیورٹی وجوہات پر انہیں وہاں جانے کی اجازت نہیں دی۔

Pakistan Arif Alvi (picture alliance/dpa/S.Akber)

ڈاکٹر عارف علوی

دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور سابق وزیر اطلاعات ونشریات قمر الزمان کائرہ کے مطابق خراب موسم کے باعث ان کی قیادت اب تک ’’چِترال‘‘ نہیں جا پائی۔ 

Qamar Zaman Kaira (picture alliance/dpa/M.Farman)

قمر الزمان کائرہ

تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماؤں سے ڈی ڈبلیو کی مکمل بات چیت سننے کے لیے نیچے دیے گئے لنکس کو پریس کیجیے۔

Audios and videos on the topic