1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تباہی کے باوجود جاپانی قوم کا اجتماعی رویہ متاثرکن

بہت طاقتور زلزلے اور سب کچھ بہا کر لے جانے والی سونامی لہروں کے باعث وسیع تر تباہی کے باوجود جاپانی باشندوں کو دنیا غالباﹰ ایک ایسی قوم کے طور پر یاد رکھے گی، جو اس قدر بربادی کا سامنا بڑی ہمت اور حوصلے سے کر رہے ہیں۔

default

انتہائی حد تک تباہی کے باوجود صبر اور تعمیر نو کا حوصلہ متاثر کن

بین الاقوامی ذرائع ابلاغ میں کسی بھی جگہ ایسی تصویروں کی کوئی کمی نہیں ہے، جن میں جاپان میں آنے والے زلزلے کے نتیجے میں شدید تباہی اور پھر سونامی لہروں کی وجہ سے ہونے والی بربادی کے مناظر ابھی تک دیکھے جا سکتے ہیں۔ لیکن ان ہولناک قدرتی آفات کی میڈیا کوریج کا ایک دوسرا پہلو بھی ہے۔

ان تصویروں اور ویڈیو رپورٹوں میں جاپانی باشندے اور امدادی کارکن تباہ شدہ علاقوں اور منہدم ہو جانے والی عمارات کے ملبے سے اپنے چاہنے والوں اور عام شہریوں کو بڑے صبر اور تحمل سے تلاش کرتے نظر آتے ہیں۔ جہاں زلزلے اور سونامی کے متاثرین کو کھانے پینے کی اشیاء اور پینے کے صاف پانی کی ضرورت ہے، وہاں بھی متاثرین بڑے صبر سے ان امدادی اشیاء کے پہنچنے کا انتظار کر رہے ہیں۔

Flash-Galerie Japan nach dem Erdbeben und Tsunami

جاپان کی سیلف ڈیفینس فورس کے کارکن متاثرہ علاقوں میں زخمیوں اور ہلاک شدگان کی تلاش ابھی تک جاری رکھے ہوئے ہیں

پورے جاپان میں کسی بھی متاثرہ علاقے میں کہیں سے بھی کسی لوٹ مار کی کوئی رپورٹ نہیں ملی اور جہاں روزمرہ کی اشیاء کی خریداری کے لیے سٹور ابھی بھی کھلے ہیں، وہاں بھی عام صارفین اپنی باری کے انتظار میں قطاروں میں کھڑے نظر آتے ہیں۔

مغربی ملکوں میں انٹرنیٹ کی کئی بلاگنگ ویب سائٹس پر وہاں کے عام شہری اس بات پر حیران ہیں کہ جاپانی باشندے مجموعی طور پر ایسے حالات میں بھی، جب انہیں اپنے ملک کی تاریخ کے سب سے طاقتور ترین زلزلے اور تباہ کن سونامی لہروں کے نتائج کا سامنا ہے، کسی بدحواسی کا شکار ہو جانے یا لوٹ مار پر اتر آنے کی بجائے مسلسل بڑے ہوشمندانہ طرز عمل کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔

امریکہ کی ہارورڈ یونیورسٹی کے پروفیسر جوزف نائی کے مطابق جس طرح جاپانی قوم ان تباہ کن قدرتی آفات کا مقابلہ کر رہی ہے، اس سے طویل المدتی بنیادوں پر جاپان کو بحیثیت قوم فائدہ ہی ہو گا کیونکہ اس طرح اس کی ایک ’سوفٹ پاور‘ کے طور پر ساکھ مزید بہتر ہو گی۔ ’سوفٹ پاور‘ ایک ایسی اصطلاح ہے، جو خود پروفیسر Nye ہی کی ایجاد کردہ ہے۔ اس سے ان کی مراد کسی قوم کا وہ رویہ ہے، جس کے تحت وہ خود کو دوسری قوموں کی نظر میں زیادہ پر کشش بنا کر ملکی، علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر اپنے مقاصد حاصل کر سکتی ہے۔

Flash-Galerie Japan Supermarkt leere Regale

جاپانی شہر موری یاما کی ایک سپر مارکیٹ میں ایک خاتون خریدار اشیائے خوراک کی ایک خالی شیلف کے سامنے

ہارورڈ یونیورسٹی کے اس پروفیسر کے بقول اس میں کوئی شک نہیں کہ جاپان میں زلزلے اور سونامی لہروں کی وجہ سے تباہی لامحدود حد تک زیادہ ہے، انسانی جانوں کا ضیاع بھی ہزاروں میں ہے، لیکن یہی المناک واقعات باقی ماندہ دنیا کو جاپانی معاشرے کے چند بہت پر کشش پہلوؤں سے بھی متعارف کراتے ہیں۔

پروفیسر Nye کا کہنا ہے کہ اس وقت پوری دنیا جاپان کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کر رہی ہے لیکن ساتھ ہی جاپانی قوم نے بین الاقوامی برادری پر یہ بھی ثابت کر دیا ہے کہ ان کا معاشرہ ایک مستحکم، منظم اور بہت مہذب معاشرہ ہے۔ ’’جاپان اتنی بڑی تباہی کے لیے اتنا ہی اچھی طرح تیار تھا، جتنا کہ کوئی بھی دوسری ترقی یافتہ اور جدید ریاست ہو سکتی تھی۔ اس کے علاوہ اتنی بڑی تباہی پر جاپانی قوم کا رد عمل بہت ہی پرسکون اور منظم رہا ہے۔‘‘

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس