1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

تاحال نظر انداز کردہ طبقے بھی فیشن کی رنگین دنیا میں

وقت کے ساتھ ساتھ خواجہ سراؤں، سیاہ فاموں اور خود کو خواتین کے رُوپ میں پیش کرنے والے مردوں جیسے تاحال نظر انداز کردہ طبقے بھی ہمت، حوصلے اور اختراعی سوچ کے ساتھ فیشن کی رنگین دنیا میں کامیابی سے قدم جما رہے ہیں۔

USA New York Fashion Week 2016 (Trans Model)

2013ء میں یہ وہ پہلے خواجہ سرا ماڈل تھے، جن کے ساتھ ’ٹرانس جینڈر‘ نے معاہدے کیے

نت نئے فیشن کی تشہیر کرنے والی ماڈلز اپنے لمبے قد اور دُبلے پتلے جسم کی وجہ سے زیادہ تر ایک جیسی دکھائی دیتی ہیں جبکہ فیشن میں تو دعویٰ ہی ممتاز، انوکھے اور سب سے الگ ہونے کا کیا جاتا ہے۔

چھبیس سالہ خواجہ سرا پَیش ڈی کا تعلق تھائی لینڈ سے ہے اور گزشتہ چند برسوں کے دوران اُس کا چہرہ بہت سے جرائد اور فیشن میگزینز کے سرورق کی زینت بن چکا ہے۔ جب اس ماڈل نے 2010ء میں تھائی لینڈ سے نیویارک میں قدم رکھے تو اُسے جلد ہی اندازہ ہو گیا کہ اپنی جنس اور اپنے رنگ و نسل کی بناء پر اُسے فیشن کی دنیا میں دشواریوں کا سامنا  کرنا پڑے گا کیونکہ کوئی بھی ماڈل ایجنسی اُس کے ساتھ معاہدہ کرنے پر راضی نہ ہوئی۔

تب پَیش ڈی نے خود ہی ہمت کی اور فیش شوز میں کیٹ واک کرتے ہوئے بتدریج فیشن کی دنیا میں اپنے قدم جمانے کا آغاز کیا، یہاں تک کہ 2013ء میں اُس نے ’ٹرانس ماڈل‘ کے نام سے اپنی نوعیت کی پہلی ماڈل ایجنسی قائم کر دی، جس کا کام ہی خواجہ سرا ماڈلز کو متعارف کروانا تھا:’’یہ آئیڈیا بہت زیادہ کامیاب ہوا۔ میں ایسے امکانات سامنے لانا چاہتی تھی تاکہ خواجہ سرا بھی اپنی خوبصورتی دکھا سکیں۔‘‘

2013ء میں ٹورانٹو میں نفیسہ کیپ ٹاؤن والا کی جانب سے قائم کی جانے والی ماڈل ایجنسی لارڈ بھی اپنی نوعیت کی پہلی ایجنسی تھی۔ اس کی خصوصیت صرف اور صرف سیاہ فام ماڈلز تھیں۔ آج کل اس ایجنسی نے تقریباً ساٹھ ماڈلز کے ساتھ معاہدے کر رکھے ہیں اور اُن میں سے ایک بھی سفید فام نہیں ہے۔ فیشن کی دنیا پر آج بھی سفید فام ماڈلز کا غلبہ ہے۔ ’دی فیشن سپاٹ‘ کے اعداد و شمار کے مطابق نیویارک کے گزشتہ فیشن ویک میں ستّر فیصد ماڈلز سفید فام تھے۔

New York Fashion Week Anniesa Hasibuan (picture-alliance/abaca/S. Acar)

گزشتہ نیویارک فیش ویک میں ایک مسلمان ڈیزائنر انیسہ حسیبوان نے اپنا حجاب کلیکشن بھی متعارف کروایا

ہیومن رائٹس کیمپین نامی ادارے کی ایک رپورٹ کے مطابق صرف 2015ء ہی میں امریکا میں اکیس خواجہ سراؤں کو قتل کر دیا گیا۔ نسل پرستی کی بنیاد پر سیاہ فاموں کو بھی قتل کرنے کے واقعات میں تشویشناک حد تک اضافہ ہو گیا ہے۔ فرانس میں مسلمان خواتین کے پیراکی کے لباس بُرقینی پر پابندی عائد کی گئی۔ اس طرح کے واقعات پر فیشن کی دنیا میں بھی تشویش ظاہر کی جا رہی ہے۔

فیشن کی دنیا میں اب پَیش ڈی اور نفیس کیپ ٹاؤن والا کے ماڈلز بھی زیادہ سے زیادہ شرکت کرنے لگے ہیں، یہاں تک کہ گزشتہ نیویارک فیش ویک میں ایک مسلمان ڈیزائنر انیسہ حسیبوان نے اپنا حجاب کلیکشن بھی متعارف کروایا۔