1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

تاجکستان میں دہشتگردی کے واقعہ میں 25فوجی ہلاک

تاجکستان میں گزشتہ اتوار کو اس سال دہشتگردی کے سب سے خونریز واقعہ میں 25 فوجییوں کی ہلاکتوں کے بعد آج پیر کے روز ملک High Alert پر تھا،حکومت نے ان ہلاکتوں ک‍ا ذمہ دار مسلم انتہاپسند کو ٹھرایا ہے۔

default

تاجک صدر ایمومالی رحمان

دہشتگردی کا یہ تازہ واقعہ تاجکستان کے دارالحکومت دوشنبہ سے ڈھائی سو کلومیٹر دور واقع راشت وادی میں پیش آیا تاجک فوج کے سنیئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ اس صبح تک مرنے والے فوجیوں کی تعداد 25جبکہ زخمیوں کی تعداد 20 ہے جن میں اکثر کی حالت نازک ہے۔

Osama bin Laden

القائدہ کےکچھ دہشتگرد 25 اگست کو تاجکستان کی ایک جیل سے بھاگنے میں کامیاب ہوگئے تھے

وزراتِ دِفاع نے 23 ہلاکتوں اور دس زخمیوں کی تصدیق کرتی ہوئے اس حملے کو سابق تاجک جنگی کمانڈر مولو عبدولو اور ان کی دہشت گرد تنظیم کا کام ٹھرایا، مولو عبدولو کے بارے میں عام خیال یہ ہے کہ وہ افغانستان سے دوبارہ ملک میں داخل ہوا تھا۔ تاجک وزیرِدفاع فریدون مخمدعلئی کے مطابق مولو عبدولو کی تنظیم میں تاجک شہریوں کے علاوہ پاکستانی،افغانستان اور چیچنیا اور روس کے شہری بھی شامل تھے۔

تاجکستان کے صدر ایمومالی رحمان جو اس وقت اقوامِ متحدہ کی جنرل اسمبلی میٹنگ میں شرکت کے لئے نیو یارک میں ہیں انہوں نے اپنی حکومت کو حالات قابو میں لانے کے لئے ممکنہ اقدامات کے احکامات جاری کئے ہیں۔

تاجک وزیرِدفاع کا کہنا ہے کہ انہوں نے اس حملے کے بعد راشت وادی کے پہاڑی علاقے میں جسے اسلامی انتہاپسندوں کا گڑھ سمجھا جاتا ہے میں ملیڑی آپریشن شروع کیا ہے جس کے تحت یا تو اسلامی انتہاپسندوں کو مارنے یا پھر ان کو گرفتار کرنے کا حکم بھی جاری کر دیا گیا ہے۔

دہشتکردی کے شکار ملک تاجکستان کی حکومت نے نے اسلامی انتہاپسندوں کو اس کا زمہ دار ٹھرایا ہے۔

رپورٹ : سمن جعفری

ادارت : کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس