1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

’بیٹا جنگ روک دو‘ قذافی کا اوباما کو خط

امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن نے لیبیا کے رہنما معمر قذافی کی جانب سے جنگ بندی کی اپیل کو مسترد کر دیا ہے۔ قذافی نے ذاتی طور پر امریکی صدر باراک اوباما سے ایک خط کے ذریعے یہ اپیل کی تھی۔

default

لیبیا کی جانب سے پہلے بھی امریکہ کو کئی خط لکھے جا چکے ہیں

لیبیا کے رہنما معمر قذافی نے امریکی صدر کے نام تین صفحوں پر مشتمل ایک خط لکھا ہے، جس میں انہوں نے لیبیا میں امریکی اور اس کے ات‍حادیوں کی فضائی کارروائی فوری طور پر روکنے کی اپیل کی ہے۔ اس خط کے جواب میں امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے معمر قذافی سے ملک چھوڑنے کا مطالبہ کیا ہے۔ کلنٹن کے بقول قذافی بخوبی جانتے ہیں کہ انہیں کیا کرنا ہے۔ ’’ فائر بندی کی ضرورت تو ہے لیکن اس سے پہلے قذافی کی فورسز کو وہ علاقے خالی کرنے ہوں گے، جو انہوں نے زبردستی اپنے قبضے میں لیے ہوئے ہیں۔ اس موقع پر قذافی کو اقتدار سے الگ ہونے اور لیبیا چھوڑنے کے حوالے سے بھی فیصلہ کرنا ہو گا۔‘‘

Obama zu Libyen in Washington

اوباما انتظامہ نے معمر قذافی کا خط موصول ہونے کی تصدیق کر دی ہے

ایف بی آئی کے ڈائریکٹر رابرٹ مُلر نے خدشہ ظاہرکیا ہےکہ لیبیا کے ایجنٹ ممنکہ طور پر امریکہ میں داخل ہو کر جوابی حملے کر سکتے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا، ’’ ہمیں ان افراد کا سراغ لگانا ہو گا تاکہ یہ ہمارے لیے کوئی خطرہ نہ بن سکیں‘‘۔

معمر قذافی کی جانب سے جنگ بندی کی اپیل ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے کہ باغیوں کی کاررائیوں میں ایک مرتبہ پھر تیزی آئی ہے۔ باغیوں نے اس موقع پر مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کومورد الزام ٹہراتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اس سلسلے میں خاطر خواہ انتظامات نہیں کر رہا۔

باراک اوباما کے ترجمان جے کیرنی نے قذافی کا خط وصول ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ قذافی کی جانب سے یہ کوئی پہلا خط نہیں ہے۔ انہوں نے خط کا متن اور دیگر تفصیلات بتانے سے گریز کیا۔ خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق قذافی نے اس خط میں اوباما کو ’’ہمارا بیٹا‘‘ اور ’’عزت ماب‘‘کہہ کر مخاطب کیا ہے۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM