1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بیلاروس بم دھماکہ، متعدد افراد گرفتار

پیر کے روز دارالحکومت منسک میں ہوئے بم دھماکے کے ملزمین کی تلاش جاری جب کہ پولیس نے اس سلسلے میں متعدد افراد کو گرفتار کرنے کا دعوی کیا ہے۔ اس دھماکے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد بارہ ہو گئی ہے۔

default

بیلاروس کے دارالحکومت منسک میں پیرکے روز ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد بارہ ہو گئی ہے۔ وزارتِ صحت کے مطابق ٹرین اسٹاپ پر ہونے والے اس بم دھماکے میں ایک سو چالیس افراد زخمی ہوئے ہیں، جن میں سے بائیس کی حالت خاصی تشویش ناک ہے۔  ذرائع کے مطابق بہت سے زخمی جسمانی طور پر معذور ہو گئے ہیں۔ منسک حکام نے بتایا کہ یہ ایک دہشت گردانہ حملہ تھا اور اس حوالے سے کئی مشتبہ افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

بیلاروس کے صدر الیگزینڈر لوکاشینکو کا کہنا ہے کہ یہ دھماکہ دراصل ملک کو کمزور کرنے کی سازش ہے۔ لوکا شینکو انیس سو چورانوے سے اس سابقہ روسی ریاست پر حکومت کر رہے ہیں۔

Explosion in der U-Bahn in Minsk

صدر لوکاشینکوکے مطابق دھماکہ ملک کو کمزور کرنے کی ایک سازش ہے

بیلاروسی حکّام کا کہنا ہے کہ اس بات کا تعین نہیں ہوسکا ہے کہ اس دھماکے کے پیچھے کون ہے۔ وزارتِ داخلہ کے مطابق یہ بم ریموٹ کنٹرول کے ذریعے استعمال کیا گیا تھا۔ جس وقت اس بم کو دھماکے سے اڑایا گیا تھا اس وقت جائے حادثہ پر تین سو کے قریب افراد تھے۔

صدر لوکاشینکو نے اس بم دھماکے کے پیچھے ’بیرونی ہاتھ‘ کا اشارہ دیا ہے۔ گو کہ بم دھماکے کا طریقہِ کار روس میں ہونے والے بم دھماکوں سے ملتا جلتا ہے تاہم بیلاروس میں اسلامی علیحدگی پسندی یا اسلامی عسکریت پسندی کی کوئی نظیر موجود نہیں ہے۔

گزشتہ برس دسمبر میں ہونے والے صدارتی انتخابات، جن میں لوکاشینکو چوتھی بار صدر منتخب ہوئے تھے، مبصرین کی رائے میں غیر شفّاف تھے۔ ان انتخابات کے بعد ملک میں صدر کے خلاف کئی مظاہرے بھی ہوئے تھے۔ اب صدر کے مخالفین کا کہنا ہے کہ اس دھماکے کو استعمال کرتے ہوئے حکومت مخالفین پر نئے کریک ڈاؤن کا آغاز کر سکتی ہے۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: عدنان اسحاق